.

سعودی عرب میں جنگلی شاہینوں کی تعداد بڑھانے کے پروگرام کی تحسین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب نے جنگلی باز(شاہین) کی آبادی میں اضافے اور تحفظ کے لیے ایک نیا پروگرام شروع کیا ہے۔بین الاقوامی باز ایسوسی ایشن کے سابق سیکریٹری نے سعودی عرب کے اس پروگرام کو سراہا ہے۔

اس ہدد پروگرام کے تحت مقامی بازوں کو ان کے قدرتی ماحول میں چھوڑا جائے گا۔بین الاقوامی ایسوسی ایشن کے ایگزیکٹو چیئرمین مارک اوپٹن نے ہدد کے ٹویٹر پروفائل پر ایک ویڈیو پوسٹ کی ہے۔انھوں نے سعودی عرب کے اس منصوبہ کو شاندار قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ’’اس سے دنیا بھر کے شاہین نوازوں کی بازوں کے تحفظ کے لیے امنگیں پوری ہوں گی اور ہم اس منصوبہ کی ہر ممکنہ مدد کریں گے۔‘‘

اس باز (الصقارہ) تحفظ منصوبہ میں رضاکار ، ویٹرنری ماہرین ، عالمی سائنس دان اور بازوں کو پالنے والے مقامی لوگ حصہ لیں گے۔اس کے تحت وسط ایشیا سے تعلق رکھنے والے اس مہاجر پرندے کی آبادی بڑھانے اور سعودی عرب میں مقامی شاہینوں کے تحفظ پر توجہ مرکوز کی جائے گی۔

واضح رہے کہ سعودی عرب میں ہزاروں سال سے شاہینوں کا ورثہ موجود ہے اور یہاں شاہین بہت مہنگے داموں فروخت ہوتے ہیں۔ اکتوبر2020ء میں ایک باز 173000 ڈالر میں فروخت ہوا تھا۔یہ اب تک سعودی عرب میں کسی باز کی سب سے زیادہ قیمتِ فروخت ہے۔

سعودی عرب میں شاہینوں کو اڑانے اور ان کے شکار کے میلے بھی منعقد ہوتے رہتے ہیں۔ دسمبر 2020ء میں اثری الخالدی نے دارالحکومت الریاض میں بازوں کو اڑانے کے ایک مقابلے میں شرکت کی تھی۔وہ بازوں کے کسی مقابلے میں شرکت کرنے والی پہلی سعودی خاتون تھیں۔