کینیڈا : مسلح شخص کی کلہاڑی اور اسپرے کے ساتھ مسجد میں حملے کی کوشش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کینیڈا میں پولیس نے بتایا ہے کہ میسی ساگا شہر میں ایک شخص نے مسجد میں گھس کر نمازیوں پر حملے کی کوشش کی۔ مذکورہ حملہ آور کے پاس ایک کلہاڑی اور اسپرے تھا۔ یہ اسپرے ریچھ کو بھگانے کے واسطے استعمال کیا جاتا ہے۔ مسجد میں موجود نمازیوں نے حملہ آور پر قابو پا لیا۔

پولیس کے بیان کے مطابق حملہ آور کی عمر 24 برس ہے اور اسے گرفتار کر لیا گیا۔ اس سے قبل اسپرے کے نتیجے میں بعض نمازی معمولی طور پر متاثر ہوئے۔

پولیس کا اندازہ ہے کہ یہ "انفرادی عمل" تھا جو "اسلام معاند فعل" ہو سکتا ہے۔

ادھر کینیڈا کے وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے اس واقعے پر اپنی "گہری تشویش" کا اظہار کیا ہے۔ اپنی ایک ٹویٹ میں انہوں نے حملے کی کوشش کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ کینیڈا میں ایسے افعال کی کوئی گنجائش نہیں۔ ٹروڈو نے مسجد میں موجود لوگوں کی "بہادری" کو سراہا جنہوں نے حرکت میں آ کر حملہ آور کو قابو کر لیا۔

وزیر اعظم کے علاوہ بھی کئی سیاسی شخصیات نے اس واقعے کو قابل مذمت قرار دیا ہے۔ ان میں ٹورنٹو کے میئر شامل ہیں۔

گذشتہ برس جون میں ایک چھوٹے ٹرک ڈرائیور نے اونٹاریو میں دانستہ طور پر ایک مسلم خاندان کو کچل کر موت کی نیند سلا دیا تھا۔ اس واقعے نے پورے کینیڈا میں غم و غصے کی لہر دوڑا دی تھی۔ وزیر اعظم ٹروڈو نے ٹرک ڈرائیور کو "دہشت گرد" قرار دیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں