ایران:احتجاج کی وائرل ویڈیومیں نمودار ہونے والی نوجوان خاتون فائرنگ سے قتل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران میں حالیہ احتجاج کی ایک وائرل ویڈیومیں نمودار ہونے والی ایک اورنوجوان خاتون کو مبیّنہ طورپر سکیورٹی فورسز نے گولی مار قتل کردیا ہے۔

ایرانی ذرائع ابلاغ اور سوشل میڈیا کی اطلاعات کے مطابق 23 سالہ خاتون حدیث نجفی کی اس ہفتے کے اوائل میں حکومت مخالف مظاہروں میں شامل ہونے کی تیاری کی ایک ویڈیو منظرعام پرآئی تھی اور یہ بہت جلد وائرل ہوگئی تھیں۔

ایرانی صحافی فرزاد سیفی کران نے خبردی ہے کہ نجفی بدھ کے روز کرج شہر میں سکیورٹی فورسز کی فائرنگ سے ہلاک ہو گئی تھیں اور ان کے چہرے اور گردن پر کئی گولیاں لگی تھیں۔

سرگرم کارکنوں نے بھی تصدیق کی ہے کہ مقتولہ نجفی وہی خاتون ہیں جووائرل ہونے والی ایک ویڈیو میں حکومت مخالف مظاہروں میں شامل ہونے کی تیاری کررہی تھیں۔ان کے اہل خانہ نے اتوار کے روز ان کے جنازے کی فوٹیج جاری کی ہے۔

ایران میں 16ستمبر کو نامناسب سرپوش اوڑھنے کی پاداش میں 22 سالہ مہسا امینی کی مذہبی پولیس کے زیرحراست ہلاکت کے بعد سے پُرتشدد مظاہرے جاری ہیں۔امینی کو13 ستمبر کواخلاقی پولیس نے مبیّنہ طور پرملک میں نافذالعمل لباس کے سخت ضابطۂ اخلاق پرعمل نہ کرنےپرگرفتار کیا تھا۔

ان کی ہلاکت کے واقعے کے ردعمل میں ایران کے مختلف شہروں میں رات کے وقت ہونے والے مظاہروں کے دوران میں چالیس سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور سینکڑوں کو گرفتارکرلیا گیا ہے۔مہلوکین اور زخمیوں میں زیادہ ترمظاہرین ہیں لیکن ان میں سکیورٹی فورسز کے اہلکار بھی شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں