صحرا کے وسط میں پھول، دو تصویروں نے لیبیا کے شہریوں کو مسحور زدہ کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لیبیا میں سوشل میڈیا پر وائرل دو تصویروں نے شہریوں کو مسحور زدہ کرکے رکھ دیا، دونوں تصویریں جنگل میں آگ کی طرح پورے ملک میں پھیل گئیں اور لوگوں کو تبصروں پر مجبور کر دیا۔ تصاویر جاری کرنے والے افراد نے دعویٰ کیا تھا کہ بارش کے بعد صحرا کے وسط میں رنگ برنگے اوردیدہ زیب پھول اگ آئے ہیں۔

پہلی تصویر میں ریگستانی زمین کے وسط میں جامنی رنگ کے پھول دکھائے گئے تھے اور دوسری تصویر میں ریت میں پیلے رنگ کے پودے دکھائے گئے تھے۔

کچھ سوشل میڈیا صارفین نے ان تصاویر پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ’’گزشتہ دنوں ہمارے لیبیا کے اندر بارش ہوئی اور یہ پودے صحرا کے بیچوں بیچ اگ آئے ہیں‘‘

تصاویر فیک ہیں

تاہم اے ایف پی کے مطابق پہلی تصویر کی تلاش سے معلوم ہوا کہ یہ فوٹوگرافر کرس کلیولینڈ کے فیس بک اکاؤنٹ پر 2018 میں پوسٹ کی گئی تھی۔

معلوم ہوا کہ یہ تصویر امریکہ میں نیواڈا کے صحرا میں واقع ’ڈیتھ ویلی‘ میں لی گئی ہے اور اسے ’دی آدر سائیڈ آف ڈیتھ ویلی‘ کے عنوان سے ایک ای بک میں شامل کیا گیا ہے۔ تصویر اسی کتاب کے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر دیکھی جا سکتی ہے۔

جہاں تک دوسری تصویر کا تعلق ہے، یہ انسٹاگرام پر فوٹوگرافر جارج سٹین میٹز کے اکاؤنٹ میں شائع ہوئی اور اسے چین کے صحرائے تاکلامکان میں لیا گیا۔

یہ امر قابل ذکر ہے کہ سوشل میڈیا اکثر جعلی خبروں، تصاویر اور ویڈیوز سے بھرا رہتا ہے اور انہیں صارفین میں سچ سمجھ کر پھیلایا جاتا ہے، لہٰذا سب کو ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں