لیبیا میں امام مسجد کا بچے کو برہنہ کر کے تشدد، عوام میں غم وغصہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لیبیا میں ایک امام مسجد کے ہاتھوں قرآن پاک حفظ کرنے والے ایک بچے کو برہنہ کر کے تشدد کا نشانہ بنائے جانے کی ویڈیو پر عوامی حلقوں کی طرف سے شدید غم وغصے کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ایک ویڈیو میں معلم امام مسجد کو ایک بچے پر تشدد کرتے اور اسے وحشیانہ طریقے سے مار پیٹ کرتے دیکھا جا سکتا ہے۔ یہ ویڈیو العربیہ ڈاٹ نیٹ کی ٹیم نے دیکھی ہے مگر اس کے مناظر کی وجہ سے نشر نہیں کیا جا رہا ہے۔

ویڈیو میں ایک داڑھی والا شخص دیکھا جا سکتا ہے جو ایک نہتے بچے پر بدترین تشدد کرتا ہے اور دوران تشدد اس کی قمیض تک اتار دیتا ہے۔ بچے کی چیخ پکار کے باوجود امام مسجد پلاسٹک کی ایک ٹیوب کے ساتھ بچے پر تشدد کرتا ہے۔

اس واقعے نے عوامی حلقوں میں شدید غم وغصے کو جنم دیا ہے۔ شہریوں نے بچے پر تشدد کرنے والے قاری کی فوری گرفتاری اور اس کے خلاف سخت قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

"ام وسیم" نامی ایک کارکن نے ایک پوسٹ لکھی جس میں اس نے حکام سے اس مسجد کا پتہ لگانے کا مطالبہ کیا جس میں یہ واقعہ پیش آیا تھا۔ انہوں نے دوسرے بچوں کو تحفظ دینے اور سفاک امام مسجد کو گرفتار کرنے کا مطالبہ کیا۔

خیال رہے کہ لیبیا کا قانون اساتذہ اور اسکول کے دیگر عملے کو طلباء کے خلاف ہر طرح کی مار پیٹ اور تشدد کا استعمال کرنے سے منع کرتا ہے۔ بچوں پر تشدد کرنے والے استاد کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی سفارش کی گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں