پہاڑوں نے برف کی چادر اوڑھ لی، دیکھئے تبوک کی دلکش تصاویر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

شمالی سعودی عرب میں تبوک کے علاقے میں جبل اللوز کی چوٹیوں کو برف نے ڈھانپ لیا اور اس کی دلکش تصویریں نظر آ گئیں جنہوں نے دیکھنے والوں کو مسحور کردیا ہے۔

تبو ک کو اس وقت شدید سردی کا سامنا ہے اور برف باری شروع ہوگئی ہے۔ تبوک کے معروف جبال اللوز نے برف باری کی وجہ سے سفید چادر اوڑھ لی ہے۔ یہاں کی چوٹیوں پر عام طور پر ہر سال برفباری ہوتی ہے۔

شمال میں موسمیات کے قومی مرکز کے ڈائریکٹر فرحان العنزی نے سعودی پریس ایجنسی (SPA) کو بتایا کہ مملکت کے شمال میں برف باری خاص طور پر "بادام کے پہاڑ" یا جبل اللوز اور اس کے آس پاس کے علاقوں پر منحصر ہے۔ اس کے دو اہم عوامل ہیں ۔ پہلا عامل مناسب نمی کی دستیابی کے ساتھ قطبی ڈپریشن کی گہرائی اور حرکت کا راستہ ہے۔ چونکہ قطبی ڈپریشن زیادہ تر شمال مغربی علاقے علقان اور جبل اللوز کو چھوتا ہے۔ اس کا اثر شاذ و نادر ہی تبوک کے علاقے کے جنوب تک پہنچتا ہے جہاں الحرۃ پہاڑ ہیں۔

دوسری بنیاد انجماد کی لکیر کے نزول کی حد ہے، کیونکہ قطبی دباؤ کے ساتھ ٹروپوس کی سطح میں کمی واقع ہوتی ہے اور اس طرح ماحولیاتی تہوں کی سطح میں کمی واقع ہوتی ہے۔

العنزی نے کہا کہ جن عوام سے زمینی سطح پر برف باری کا امکان بڑھتا ہے ان میں موسمی نقشوں پر کھینچی گئی لکیریں ہیں جو تہہ کے بڑھنے یا گرنے کی حد کو ظاہر کرتی ہیں۔ اس طرح دیکھا جاتا ہے کہ ڈپریشن کتنا گہرا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اصل پیمائش کسی بھی سطح پر صفر ڈگری سیلسیس درجہ حرارت ہے۔

تبوک کی جنل اللوز

دوسری جانب تبوک کے علاقے میں بہت سے سرکاری اداروں نے برف باری کے مقامات کی طرف جانے والی سڑکوں کے ساتھ ساتھ لوگوں کی نقل و حرکت کی شدت کے نتیجے میں پیش آنے والے کسی بھی خطرے کا سامنا کرنے کے لیے اپنی تیاریاں تیز کردی ہیں۔ ان مقامات پر آنے والے سیاحوں کی رہنمائی اور ان کے تحفظ کیلئے ارتکاڑ بڑھا دیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں