خاتون کے اسپتال کے پارک میں بچے کو جنم دینے کے واقعے پر عام میں شید غم وغصہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مراکش میں اسپتال کے طبی عملے کی جانب سے بچے کو جنم دینے کےلیے خاتون کو اسپتال میں داخل کرنے سے انکار کے بعد حاملہ خاتون نے عوامی مقام پر اسپتال کے پارک میں بچے کو جنم دیا۔ اس واقعے کے سامنے آنے کے بعد عوام میں شدید غم وغصے کی لہر دوڑ گئی ہے جب کہ دوسری طرف حکام نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے اس کی تحقیقات کا اعلان کیا ہے۔

اسپتال کا خاتون کو داخلے سے انکار

تفصیلات کے مطابق ایک حاملہ خاتون یوسفیہ شہر کے سرکاری اسپتال میں بچے کی پیدائش کے لیے لائی گئی تو طبی عملے نے اسے داخل کرنےسے انکار کر دیا اور اسےواپس جانے کو کہا کیونکہ اس کی مقررہ تاریخ ابھی نہیں آئی تاہم لیبرتکلیف نے اسے فوراً حیران کر دیا۔ اسے اسپتال کے پارک میں لے جایا گیا جہاں اس نےبچے کو جنم دیا۔

سوشل میڈیا کے کارکنوں نے ایک ویڈیو ٹیپ پوسٹ کی ہے جس میں حاملہ خاتون اسپتال کے باغ میں زمین پر کچھ لوگوں کی مدد سے بچے کو جنم دیتی نظر آئیں۔

وسیع پیمانے پر مذمت

اس واقعے پر سوشل میڈیا پیجز پر بڑے پیمانے پر مذمت سامنے آئی ہے جہاں کارکن فتحی تیجانی نے ایک پوسٹ میں اسپتال کے صحت کے عملے کی بے حسی اور ضروری امداد فراہم کرنے میں ناکامی اور ایک خاتون اور اس کے نومولود کی زندگی کو خطرے میں ڈالنے پر تنقید کی۔ انہوں نےحکام سے اسپتال ذمہ داروں کی انجام دہی میں کوتاہی برتنے پرذمہ داروں کے خلاف فوری کارروائی کامطالبہ کیا۔

دریں اثنا مراکش کے وزیر صحت اور سماجی تحفظ خالد آیت طالب نے منگل کو اس واقعے کے حالات و واقعات کی تحقیقات شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ انہوں نے ایک مرکزی معائنہ کمیٹی کو اسپتال روانہ کیا اور وزارت کو رپورٹ پیش کرنے کے ساتھ ضروری اقدامات اور فیصلے لینے کا اعلان کہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں