ایران میں طالبات پر پھر زہریلی گیس سے حملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایران میں طالبہ کو زہر دیے جانے کے واقعہ کی گونج میں آج پیر کو ایک احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ کرد انسانی حقوق کی تنظیم "ھینگاو" نے اپنے ٹوئٹر پر اعلان کیا ہے کہ ملک میں شمال مغرب میں موجود شہر "بانہ" میں گرلز سیکنڈری سکول پر زہریلی گیسوں سے حملہ کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا زہریلی گیسوں سے سانس لینے میں دشوار ی ہو رہی ہے۔ حالت خراب ہونے پر کچھ طالبات کو ہسپتال لے جایا گیا ہے۔ انسانی حقوق کے کارکنوں نے سکول کے اندر سے ایسے مناظر شیئر کیے ہیں جن میں کچھ خاندانوں کو جمع ہوتے دکھایا گیا۔ ایک ایمبولینس زخمیوں کو لے جانے کے لیے روکی ہوئی بھی دکھائی دی۔

ملک کے کئی علاقوں میں زہر دینے کے مشتبہ واقعات دیکھنے میں آئے ہیں۔ خاص طور پر سکول کی طالبات کو نشانہ بنایا گیا۔ انسانی حقوق کے کارکنوں نے اس صورتحال کا ذمہ دار حکام کو ٹھہرایا ہے۔

زہر کے حملوں کا آغاز "قُم" سے اس وقت ہوا جب وہاں زہریلی گیس کے درمیان سانس لینے میں شدید رکاوٹ اور آنتوں میں درد کے باعث طالبات بے ہوش ہوگئی تھیں۔ اسی طرح اب سینکڑوں سکولوں میں اسی طرح کے کیسز سامنے آگئے۔ چند روز قبل حکام نے زہر دینے کے معاملے میں متعدد گورنریٹس میں 100 سے زائد مشتبہ افراد کی گرفتاری کا اعلان کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں