متحدہ عرب امارات کے پراپرٹی ڈویلپرداماک نے 40 کروڑڈالر کے اسلامی بانڈز فروخت کردیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

دبئی میں قائم رئیل اسٹیٹ ڈویلپرداماک نے منگل کے روز تین سالہ 40 کروڑڈالر کے اسلامی بانڈ یا صقوق فروخت کردیے ہیں۔یہ رقم ابتدائی توقع سے کم تھی اور اس کا منافع 7.75 فی صد تھا۔

یہ معاملہ سرمایہ کاروں کے مطالبات اور اجلاسوں کے ایک سلسلے کے بعد سامنے آیا ہے۔یہ گذشتہ ہفتے بینچ مارک سائز کی فروخت کے لیے شروع ہوا تھا ، جس کے بارے میں سمجھا جاتا ہے کہ اس کی مالیت کم سے کم 50 کروڑ ڈالر ہوگی۔

ایس اینڈ پی کی درجہ بندی کے مطابق کمپنی کی قدراس سے قبل جاری کردہ 7.875 فی صد کے مقابلے میں کم تھی کیونکہ آرڈر بک 1.15 ارب ڈالر سے تجاوز کر گئی تھی۔

داماک کے منصوبوں میں مارکیٹ کے اوپری حصے کو ہدف بنایا گیا ہے کیونکہ کمپنی کووِڈ کی وبا کے بعد مضبوط معاشی بحالی کے تناظر میں دبئی میں پراپرٹی کے شعبے میں تیزی کا فائدہ اٹھانا چاہتی ہے۔

کمپنی نے 2021 میں اس مقصد کے لیے درخواست جمع کرائی تھی۔اس کے بعد گذشتہ سال اسے دبئی اسٹاک مارکیٹ سے خارج کردیا گیا تھاکیونکہ وبائی امراض کے اثرات نے رئیل اسٹیٹ فرموں کے منافع پربوجھ ڈالاتھا۔

صقوق اور پائیداری سے منسلک یا گرین بانڈز کے لیے سرمایہ کاروں کی طلب نے بھی نئے مسائل کو جنم دیا ہے۔پیرکے روز ابوظبی نیشنل انرجی کمپنی (تقا) نے دواقساط کے معاہدے سے 1.5 ارب ڈالر جمع کیے ہیں۔اس میں ایک ارب ڈالر کا 10 سالہ گرین بانڈ بھی شامل ہے۔

اگرچہ بہت سے مسائل خودمختار یا ریاست سے جڑے ہوئے ہیں ، لیکن داماک نجی شعبے میں کارپوریٹ قرض کے مسئلے کے لیے ایک امتحان تھا۔اس نے ڈوئچے بینک، امارات این بی ڈی کیپیٹل اور جے پی مورگن کو گلوبل کوآرڈینیٹرز اور بک رنرز کا مینڈیٹ دیاتھا جبکہ متحدہ عرب امارات کے قرض دہندگان ابوظبی کمرشل بینک، دبئی اسلامی بینک اور مشرق نے بھی اس معاہدے پر مشترکہ بک رنرز کے طور پرکام کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں