واگنر گروپ کی بغاوت: پوتین کو مسلسل رپورٹس، ماسکو میں سکیورٹی الرٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

کریملن نے کہا ہے کہ روسی صدر ولادیمیر پوتین کو واگنر گروپ کی طرف سے روسی فوج کی قیادت کے خلاف بغاوت کے اعلان کے بعد صورت حال سے لمحہ بہ لمحہ آگاہ کیا جارہا ہے۔ روسی صدر کو مسلسل رپورٹس دی جارہی ہیں۔ ماسکو میں سکیورٹی الرٹ کر دی گئی ہے

صدارتی ترجمان دمتری پیسکوف نے بتایا کہ خصوصی خدمات اور قانون نافذ کرنے والے ادارے جن میں وزارت دفاع، سکیورٹی سروس، وزارت داخلہ اور نیشنل گارڈ شامل ہیں صدر کو مسلسل آگاہ کر رہے ہیں۔

سرکاری روسی خبر رساں ایجنسی "تاس" نے ہفتہ کی صبح خبر دی کہ واگنر گروپ کے رہنما کی طرف سے روسی فوجی قیادت کے خلاف مسلح بغاوت کی کال کے تناظر میں ماسکو میں حفاظتی اقدامات سخت کر دیے گئے ہیں۔ ایک نامعلوم سکیورٹی عہدیدار نے بتایا کہ اہم ترین مقامات پر سخت حفاظتی اقدامات کئے گئے ہیں۔ نقل و حمل کی سہولیات کو مختلف اقدامات کے ساتھ مشروط کردیا گیا ہے۔

سوشل نیٹ ورکس پر گردش کرنے والی تصاویر میں دکھایا گیا ہے کہ فوجی گاڑیاں شہر میں وزارت دفاع کے قریب شہر میں اور ڈوما کونسل کے سامنے موجود ہیں۔

قبل ازیں کریملن نے اعلان کیا تھا کہ اٹارنی جنرل نے پوتین کو ایک "مسلح بغاوت" کی تحقیقات سے آگاہ کیا جو روسی فوج کی قیادت کے خلاف واگنر گروپ کی بغاوت کے بعد کھولی گئی تھی۔

یاد رہے روس میں کشیدگی اس وقت بڑھ گئی ہے جب واگنر گروپ کے رہنما پریگوزن نے جمعہ کو روسی فوج کی قیادت کے خلاف بغاوت کا مطالبہ کردیا۔ پریگوزن نے الزام لگایا کہ روسی فوج نے یوکرین میں ان کے عقبی ٹھکانوں کو نشانہ بناتے ہوئے بمباری کی جس میں واگنر گروپ کے ارکان کی بڑی تعداد ہلاک ہوگئی ہے۔ ماسکو نے واگنر گروپ کے رہنما کے الزام کی تردید کردی ہے۔ روسی حکام نے واگنر گروپ کے ارکان سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے کمانڈر پریگوزن کو بغاوت پر اکسانے کے الزام میں گرفتار کرلیں۔

پریگوزن نے کہا کہ ہمارے جنگجوؤں کی تعداد 25 ہزار ہے۔ ہم روسی فوج کے کے ارکان کو شامل ہونے کی دعوت دیتے ہیں۔

"واگنر" رہنما نے فوجی بغاوت کرنے کے حوالے سے الزام کی تردید کی اور کہا میں انصاف کے لیے مارچ کی قیادت کرنا چاہتا ہوں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں