ترکیہ: اونچی آواز میں میوزک چلانے والے کو قتل کردیا گیا

پولیس موٹر سائیکل سوار قاتل کو گرفتار کرسکی نہ اس کی شناخت معلوم کرسکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ترکیہ کے شہر استنبول میں ہفتے کے آخر میں اونچی آواز میں موسیقی چلانا معمول کی بات ہے۔ استنبول ملک کا دوسرا بڑا شہر ہے اور بیرون ملک سے آنے والوں کے لیے پہلا سیاحتی مقام ہے۔ لیکن استنبول کے اندر واقع گنگورین کے علاقے میں جو ہوا وہ حیران کن تھا۔ اونچی آواز میں میوزک چلانے کی پاداش میں ایک شہری کو چاقو کے وار کرکے بے دردی سے موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔

ہفتہ کی علی الصبح 38 سالہ ترک شہری ھچی کار میں گھر جا رہا تھا اور اونچی آواز میں میوزک سن رہا تھا کہ پیچھے سے آنے والی موٹر سائیکل کے ڈرائیور نے اسے کہا کہ میوزک کی آواز کم کردے۔ گاڑی کے ڈرائیور نے میوزک کم کرنے سے انکار کردیا تو دونوں میں جھگڑا ہوگیا۔ اس دوران موٹر سائیکل سوار شخص نے چاقو کا وار کرکے اونچی آواز میں میوزک چلانے والے کو قتل کردیا۔

مقامی ترک میڈیا کی جانب سے شائع ہونے والے ایک ویڈیو کلپ میں مقتول کو اپنی سفید کار کے قریب زمین پر پڑا ہوا دکھایا گیا تھا جب راہگیر اسے بچانے کی کوشش کر رہے تھے کہ ایک موٹر سائیکل سوار نے اس پر چاقو سے وار کیا۔ بعد میں متاثرہ شخص کو ہسپتال لے جایا گیا مگر وہ جانبر نہ ہوسکے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کو حاصل معلومات کے مطابق پولیس ابھی تک موٹر سائیکل سوار کو گرفتار کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکی، نہ ہی اب تک اس کی شناخت بتا سکی ہے۔

متاثرہ شخص کا نام سنان چلیشکانیل ہے جو 1985 میں پیدا ہوا۔ یہ شادی شدہ اور دو بچوں کا باپ ہے۔ یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ قاتل اور مقتول کو پہلے سے علم تھا یا نہیں لیکن مقتول کے محافظ نے موٹر سائیکل سوار کو جاننے سے انکار کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں