اسرائیل 1973 کے بعد سے بدترین حملے کا سامنا کر رہا: بلینکن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ہفتہ 7 اکتوبر کو غزہ کی پٹی سے فلسطینی تنظیم حماس کی جانب سے اسرائیل پر بڑا حملہ کیا گیا۔ تصادم دوسرے دن بھی جاری رہا۔ ان دو دنوں میں 700 اسرائیلیوں کی ہلاکتوں کے بعد امریکی وزیر خارجہ بلینکن نے کہا ہے کہ اسرائیل 1973 کے بعد سے بدترین حملے کا سامنا کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اب جو کچھ ہو رہا ہے اس میں فرق یہ ہے کہ یہ حملہ ایک دہشت گرد تنظیم نے کیا ہے۔ دہشت گرد تنظیم سے ان کی مراد حماس کا عسکری ونگ القسام بریگیڈ تھا۔ انہوں نے سی این این کے ساتھ انٹرویو میں اس بات کا اشارہ بھی دیا کہ اسرائیل میں امریکیوں کے لاپتہ ہونے کی اطلاعات ہیں۔

اس حملے کا اندازہ لگانے میں اسرائیلی افواج کی ناکامی کے بارے میں انہوں نے کہا کہ اس بات پر غور کرنے کا وقت آئے گا کہ اسرائیلی انٹیلی جنس سروسز نے کیا کھو دیا۔

انہوں نے ان محاذ آرائیوں میں مداخلت کرنے اور نئے محاذ کھولنے کی کسی بھی فریق کی کوشش کی مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے اس صورت حال میں اسرائیل پر حزب اللہ، شمالی علاقے یا مغربی کنارے جیسے دیگر محاذوں کو کھولنے سے گریز پر زور دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ان کے ملک کی پہلی تشویش اسرائیل کے لیے ہے کہ وہ اپنے شہروں میں دراندازی کرنے والے ہزاروں افراد کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت کو حاصل کرے۔ انہوں نے کہا کہ واشنگٹن بغیر کسی ہچکچاہٹ کے اسرائیل کی حمایت کرتا ہے اور آنے والے دنوں میں اسے اضافی امداد فراہم کر سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں