مصر اور اردن کی غزہ میں مستقل جنگ بندی کیلئے کوششیں جاری

مصری صدر السیسی اور اردن کے شاہ عبداللہ دوم کے درمیان قاہرہ میں دو ملکی سربراہی اجلاس کا انعقاد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصری صدر عبدالفتاح السیسی اور اردن کے شاہ عبداللہ دوم کے درمیان بدھ کو مصری دارالحکومت قاھرہ میں ’’ مصر اردن سربراہی اجلاس‘‘ منعقد ہوا۔ مصری ایوان صدر کے سرکاری ترجمان نے بتایا کہ دونوں رہنماؤں نے ایک مباحثہ اجلاس منعقد کیا۔ صدر سیسی نے اردن کے بادشاہ کا خیرمقدم کرتے ہوئے خطے میں پیدا ہونے والے نازک حالات کی روشنی میں اردن اور مصر دونوں کے موقف کو یک جا کرنے کے لیے مسلسل ہم آہنگی پر زور دیا۔

سرکاری ترجمان نے بتایا کہ دونوں رہنماؤں نے غزہ کی پٹی میں اعلان کردہ انسانی ہمدردی کی جنگ بندی کا خیرمقدم کیا مستقل جنگ بندی تک پہنچنے کے لیے بھرپور کام جاری رکھنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ مناسب انسانی امداد کو غزہ داخلے کی اجازت دینے کے حوالے سے مشترکہ نقطہ نظر بھی اپنایا۔ دونوں طرف سے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی اور سلامتی کونسل کی حالیہ دو قراردادوں پر بلا تاخیر عمل کی ضرورت پر بھی زور دیا گیا۔

دونوں رہنماؤں نے فلسطینی عوام کی بھوک اور اجتماعی سزا کی پالیسیوں کو مسترد کرنے کا مطالبہ کیا اور ایک مرتبہ پھر یہ اعلان کیا کہ دونوں ممالک کی طرف سے غزہ کی پٹی کے لوگوں کو غزہ کے اندر یا باہر بے گھر کرنے کی کسی بھی کوشش کو مکمل طور پر مسترد کیا جاتا ہے۔

واضح رہے جنگ کے 47 ویں روز حماس اور اسرائیل کے درمیان 4 روزہ جنگ بندی معاہدے کا اعلان کیا گیا ہے۔ یہ جنگ بندی آج جمعرات کو 10 بجے شروع ہو رہی ہے۔ معاہدے کے تحت اسرائیل کی جانب کے 50 یر غمالیوں کو رہا کیا جائے گا اور ان کے بدلے میں اسرائیل 150 فلسطینی قیدیوں کو رہا کرے گا۔ اسرائیلی وزیر اعظم نے جنگ بندی کے اس معاہدے کو مشکل فیصلہ بھی قرار دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں