یمن اور حوثی

حوثیوں کا اسرائیلی بحری جہاز اور امریکی جہازوں کو نشانہ بنانے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

حوثی گروپ نے بحیرہ عرب اور بحیرہ احمر میں ایک اسرائیلی بحری جہاز اور امریکی جنگی جہازوں کو نشانہ بنانے کی دو کارروائیوں کے نفاذ کا اعلان کیا۔ گروپ کے فوجی ترجمان یحییٰ سریع نے کہا کہ بحری افواج نے بحیرہ عرب میں ایک اسرائیلی بحری جہاز (MSC SKY) کے خلاف ٹارگٹنگ آپریشن کیا۔ اسے پر متعدد بحری میزائل برسائے گئے جو درست طور پر جا کر لگے۔

سیکیورٹی کمپنی "ایمبری" اور برٹش میری ٹائم ٹریڈ آپریشنز اتھارٹی نے اس بات کی تصدیق کی کہ یہ واقعہ عدن سے 91 ناٹیکل میل جنوب مشرق میں پیش آیا۔ ایک کنٹینر یحری جہاز جس پر لائبیریا کا جھنڈا لہرا رہا تھا اور جو اسرائیل سے تعلق رکھتا تھا کو نشانہ بنایا گیا یہ بحری جہاز سنگاپور سے جبوتی کی جانب گامزن تھا۔

سریع نے کہا کہ یہ آپریشن "بحیرہ احمر میں دشمن کے متعدد امریکی جنگی جہازوں پر متعدد بیلسٹک میزائلوں اور ڈرونز کے ساتھ ایک آپریشن کرنے کے چند گھنٹے بعد کیا گیا۔

حوثی فوجی ترجمان نے کہا کہ ان کا گروپ بحیرہ احمر اور بحیرہ عرب، خلیج عدن اور باب المندب میں جنگی جہازوں اور غیر جنگی بحری جہازوں کے خلاف اپنے حملے جاری رکھے گا اور اسرائیلی نیویگیشن کو روکتا رہے گا۔

برطانوی میری ٹائم سکیورٹی ایجنسی "ایمبری" نے اطلاع دی تھی کہ حملے میں یمن کے ساحل پر لائبیریا کا جھنڈا لہرانے والے ایک کارگو جہاز کو نشانہ بنایا گیا۔ یہ جہاز اسرائیل سے تعلق رکھنے والے کے طور پر شمارہوتا تھا۔

حوثی حملے روکنے کے لیے امریکی اور برطانوی افواج نے 12 جنوری سے یمن میں حوثیوں کے ٹھکانوں پر حملے شروع کر رکھے ہیں۔ امریکی فوج اکیلے ہی ایسے میزائلوں پر وقتاً فوقتاً حملے کرتی رہتی ہے جو اس کے بقول لانچ کے لیے تیار ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں