غزہ کے لیے "بائیڈن پلان" اور "حماس کارڈ" کے درمیان فرق کیا ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

امریکی صدر بائیڈن کی جانب سے چند روز قبل غزہ کی پٹی میں جنگ بندی کا منصوبہ پیش کیا گیا۔ اس منصوبے کے بعد علاقائی سطح پر امید کی فضا چھائی ہوئی تھی۔ تاہم یہ منصوبہ اسرائیل اور حماس کی جانب سے منظوری کا منتظر ہے اسے قبول کرنے کے امریکی اور عالمی دباؤ جاری ہے۔ اس سے قبل حماس نے ایک منصوبہ منظور کیا تھا لیکن اس عمل نہ ہوسکا تھا۔

"بائیڈن پلان" کی تفصیلات کیا ہیں اور "حماس پیپر" میں فریق کیا ہے؟ اس کا موازنہ کرنا ہوگا۔ "المجلہ" میگزین کی شائع کردہ ایک رپورٹ میں دونوں میں فرق کو واضح کیا گیا ہے۔

لفظ "تبادلہ" کا حذف

بائیڈن تجویز میں پہلے مرحلے کی پہلی شق سے لفظ "تبادلہ" کو حذف کر دیا گیا ہے۔ اب یہ کہا گیا کہ ’’دونوں فریقوں کی طرف سے فوجی کارروائیوں کا عارضی طور پر خاتمہ اور اسرائیلی افواج کا مشرق کی طرف اور گنجان آباد علاقوں سے انخلا کیا جائے گا اور انہیں وادی غزہ کے نتساریم اور کویت گول چکر سمیت غزہ کی پٹی کے تمام علاقوں میں سرحد پر تعینات کیا جائے گا۔

نئی تجویز میں غزہ معاہدے کے 22 ویں دن فوجی تنصیبات اور مقامات کو مکمل طور پر ختم کرنے کے ساتھ غزہ کی سرحد سے متصل علاقے سے اسرائیلی افواج کا انخلا بھی برقرار رکھا گیا ہے۔ "بائیڈن پلان" میں دوسرے مرحلے میں پائیدار امن کی بحالی کا کہا گیا ہے۔ 42 دن کے اس مرحلے میں فوجی اور مخالفانہ کارروائیاں مستقل طور پر بند کرنے کی بات بھی کی گئی ہے۔

پرواز کی عارضی معطلی

قیدیوں کے تبادلے کے دوران طیاروں کی عارضی معطلی 10 گھنٹے کے لیے اور 12 گھنٹوں کے لیے ہوگی۔ جہاں تک خواتین قیدیوں کی رہائی سے متعلق تیسری چیز کا تعلق ہے "بائیڈن پلان" نے ان کی تعداد 3 سے بڑھا کر 7 کر دی ہے۔ "بائیڈن پلان" میں پہلے مرحلے میں "ہشام السید اور ایویرا مینگیسٹو کی رہائی بھی رکھی گئی ہے۔ یہ ان 33 قیدیوں میں شامل ہیں جنہیں شالیط کے بدلے میں 47 قیدیوں کی رہائی میں بھی رکھا گیا تھا۔

دوبارہ گرفتار نہ کرنے کی شرائط میں ترمیم

فلسطینی قیدیوں کو دوبارہ گرفتار نہ کرنے کی شرائط میں بھی یہ ترمیم کی گئی تھی کہ آزاد فلسطینی قیدیوں کو ان الزامات کی بنیاد پر گرفتار نہیں کیا جائے گا جن پر انہیں پہلے گرفتار کیا گیا تھا۔

انروا کا نام حذف

"بائیڈن پلان" نے غزہ میں کام کرنے والی بین الاقوامی تنظیموں کی فہرست سے اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی برائے مہاجرین (UNRWA) کا نام حذف کر دیا۔ بائیڈن کی تجویز میں سات اکتوبر کے بعد قیدیوں اور زیر حراست افراد کے خلاف اٹھائے گئے اقدامات اور سزاؤں کو ختم کرنے سے متعلق ایک پیراگراف کو بھی حذف کر دیا۔ 50 کا عدد ان زخمی فوجیوں کی تعداد سے حذف کر دیا گیا جو رفح کراسنگ کے ذریعے مصر جائیں گے۔

تیسرے مرحلے میں غزہ کی پٹی کا محاصرہ ختم کرنے کو شق کو بھی حذف کردیا گیا ہے۔ اس کی جگہ متبادل جملہ تجویز کیا گیا جس میں کہا گیا ہے کہ سرحدی گزرگاہوں کو کھولا جائے گا اور رہائشیوں اور سامان کی نقل و حمل میں سہولت فراہم کی جائے گی۔ امریکی صدر کی تجویز میں اقوام متحدہ کا نام امریکہ، قطر اور مصر کے ساتھ معاہدے کے "ضامن" کے طور پر حذف کر دیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں