اسرائیل نے غزہ پر دوبارہ فضائی حملے شروع کردیے

حماس کے راکٹ حملے میں اسرائیل میں ایک یہودی کی ہلاکت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل نے مصر کی جنگ بندی کی تجویز پر اتفاق کے چندے بعد دوبارہ غزہ کی پٹی کے مختلف علاقوں پر فضائی حملے شروع کردیے ہیں جبکہ حماس کے عسکری ونگ نے بھی اسرائیل کی جانب راکٹ حملے جاری رکھے ہوئے ہیں جن کے نتیجے میں ایک یہودی ہلاک ہوگیا ہے۔

اسرائیلی فوج کے غزہ پر گذشتہ ایک ہفتے سے جاری فضائی حملوں میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد ایک سو چورانوے ہوگئی ہے جبکہ حماس کے راکٹ حملوں میں اسرائیل میں پہلی ہلاکت ہوئی ہے۔

اسرائیلی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ مصر کی جانب سے جنگ بندی کی تجویز سامنے آنے اور اس پر عمل درآمد کے لیے مجوزہ وقت کے بعد سے حماس نے چھہتر راکٹ فائر کیے ہیں۔میزائل دفاعی نظام آئرن ڈوم نے ان میں سے نو کو ناکارہ بنا دیا ہے جبکہ باقی ایسے جگہوں پر گرے ہیں جن سے کوئی جانی یا مالی نقصان نہیں ہوا ہے۔

دوسری جانب حماس کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوج نے غزہ پر بمباری بند نہیں کی تھی اور اس نے مصر کی جنگ بندی کی تجویز پر اتفاق کرنے کے فوری بعد فضائی حملے کیے ہیں۔اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ اس نے چھے گھنٹے کے وقفے کے بعد غزہ پر دوبارہ بمباری کی ہے اور حماس کے خفیہ راکٹ لانچروں ،سرنگوں اور ہتھیار ذخیرہ کرنے کی جگہوں کو نشانہ بنایا ہے۔

غزہ کی ایمرجنسی سروسز کے ترجمان اشرف القدرہ نے بتایا ہے کہ اسرائیل کی تازہ بمباری کے نتیجے میں غزہ شہر کے مشرق میں واقع علاقے زیتون میں ایک چوبیس سالہ نوجوان شہید ہوگیا ہے۔اس سے پہلے جنوبی قصبے خان یونس میں ستتر سالہ بوڑھے شخص کی شہادت ہوئی ہے اور ایک خاتون رفح میں اسرائیلی حملے میں شہید ہوگئی۔

یادرہے کہ نومبر 2012ء میں اسرائیلی فوج کی غزہ کی پٹی پر مسلط کردہ آٹھ روزہ جنگ میں ایک سو ستتر فلسطینی شہید ہوئے تھے جبکہ چھے اسرائیلی مارے گئے تھے لیکن گذشتہ آٹھ روز سے اسرائیلی فوج کی نہتے فلسطینیوں پر جاری بمباری کے نتیجے میں شہداء کی تعداد دو سو کے قریب پہنچ چکی ہے۔دوسری جانب حماس کے راکٹ حملوں میں صرف ایک یہودی مرا ہے اور چار کے شدید زخمی ہونے کی اطلاع ہے۔

اسرائیل نے منگل 8 جولائی کو آپریشن دفاعی کنارہ کے نام سے فلسطینیوں کے خلاف تباہ کن فضائی حملے شروع کیے تھے اور ان کا مقصد غزہ سے جنوبی اسرائیل کی جانب فائر کیے جانے والے راکٹوں کو روکنا تھا مگر تباہ کن بمباری کے باوجود فلسطینی مزاحمتی تنظیموں نے اسرائیل کی جانب راکٹ برسانے کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے اور ان کے فائر کیے گئے راکٹوں میں سے نو سو بائیس اسرائیل کے مختلف علاقوں میں گرے ہیں جبکہ دوسو سات کو اسرائیل کے میزائل دفاعی نظام آئرن ڈوم نے ناکارہ بنا دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں