.

لبنان میں جاری سیاسی بحران کے حل کا امکان

صدارتی امیدوار میچل عون کو مخالف امیدوار کی حمایت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں ڈیڑھ سال سے جاری سیاسی بحران اور صدر کے چناؤ میں ناکامی کے بعد ایک تازہ پیش رفت سامنے آئی ہے۔ اطلاعات کے مطابق لبنان میں مختلف سیاسی جماعتوں کے صدارتی امیدوار اور سرکردہ مسیحی سیاست دان میچل عون کے ایک حریف امیدوار دستبردار ہو گئے ہیں اور انہوں نے میچل عون کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔ اس اعلان کے بعد 20 ماہ سے صدر کے چناؤ میں ناکامی کو ختم کرنے کا اہم موقع فراہم کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق گذشتہ روز میچل عون کی ملاقات مسیحی طبقے کے نمائندہ جماعت ’’لبنانی فورسز‘‘ کے سربراہ سمیر جعجع کےہیڈ کواٹر میں ہوئی جس کے بعد دونوں رہ نماؤں نے ایک مشترکہ نیوز کانفرنس سے بھی خطاب کیا۔ نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سمیر جعجع نے صدراتی انتخاب کےدوڑ سے دستبردار اور پارلیمنٹ میں میچل عون کی حمایت کا اعلان کیا۔ لبنان کے سیاسی حلقوں کے لیے یہ اہم خبر ہے کیونکہ اس کے بعد صدر کے انتخاب کی راہ ہموار ہوئی ہے۔

دستبردار ہونے والے امیدوار سمیر جعجع نے کہا کہ انہوں نے بڑے غور خوض اور پارٹی قیادت سے صلاح مشورے کے بعد فیصلہ کیا کہ ان کی جماعت پارلیمنٹ میں میچل عون کی حمایت کرے گی تاکہ ملک میں سیاسی استحکام کو یقینی بنانے اور موجودہ سیاسی بحران کو ختم کرنے کی راہ ہموار ہو سکے۔ انہوں نے کہا کہ دستور کی بالا دستی ہماری اجتماعی سیاسی ذمہ داریوں میں سے ایک ہے اور صدر کا چناؤ دستور کی رو سے ملک کے استحکام کے لیے ناگزیر ہے۔ اگر ہم بیس ماہ سے صدر کے چناؤ میں ناکام رہے ہیں تو ہمیں سیاسی خلا کو پر کرنے کے لیے متبادل اقدامات پرغور کرنا چاہیے۔

قبل ازیں لبنانی فورسز کے ایک دوسرے رہنما ملحم الریاشی نے بھی نیوز کانفرنس سے خطاب میں کہا تھا کہ سمیر جعجع میچل عون کے حق میں دستبردار ہونے کا جلد اعلان کریں گے۔ اس سلسلے میں میچل عون اور سمیر جعجع کے درمیان ملاقات ہو گی جس میں جعجع عون کی حمایت کا اعلان کریں گے۔

خیال رہے کہ لبنان کی پارلیمنٹ میں مختلف الخیال سیاسی جماعتوں کے اپنے اپنے امیدواروں کی بھرمار کی وجہ سے گذشتہ بیس مہینوں سے صدر کے چناؤ میں ناکامی کا سامنا رہا ہے۔ میچل عون اہم ترین امیدوار ہیں مگر وہ بھی پارلیمنٹ میں درکار ووٹ حاصل کرنے میں ناکام رہے ہیں۔