شام میں ایران کے کردار پر جرمنی کو "تشویش"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جرمنی کے ہفت روزہ جریدے Der Spiegel نے جمعے کے روز جاری اشاعت میں بتایا ہے کہ جرمن وزیر اقتصادیات زیگمار گابریل اپنے تہران کے آئندہ دورے میں شام میں جاری جنگ میں ایران کے کردار کے حوالے سے تشویش کے اظہار کا ارادہ رکھتے ہیں۔ گابریل اتوار کے روز دو روزہ دورے پر ایران جائیں گے۔

گابریل کے مطابق وہ ایرانی ذمہ داران کے ساتھ اپنی ملاقات سے فائدہ اٹھاتے ہوئے اقتصادی تعلقات کے ساتھ ساتھ دیگر امور پر بھی بات چیت کا ارادہ رکھتے ہیں جن میں شام کی صورت حال کے حوالے سے بڑھتی ہوئی تشویش بھی شامل ہے۔

گابریل کا کہنا ہے کہ وہ شام کی خوف ناک صورت حال کے پیش نظر شامی حکومت کے سربراہ بشار الاسد کے ساتھ تنازع میں شامل فریقوں کے بارے میں جرمنی میں لوگوں کے غم و غصے سے آگاہ کریں گے۔

انہوں نے دو ٹوک انداز میں واضح کیا کہ "ہمارے لیے یہ ممکن نہیں کہ اس خونریز جنگ میں شام ممالک کے ساتھ اقتصادی امور کو معمول کے مطابق جاری رکھ سکیں"۔

گابریل تجارتی سیکٹر کے ذمہ داران کے ایک بڑے وفد کو لے کر ایران پہنچیں گے جس کا مقصد ممکنہ تجارتی ڈیلوں کو زیر بحث لانا ہے۔

گابریل کے مطابق اہم بات یہ ہے کہ ایران کے ساتھ انسانی حقوق ، ہتھیاروں کے حصول پر روک اور ان امور پر بات چیت کی جائے جن کے حوالے سے دونوں ملکوں کے نقطہ ہائے نظر مختلف ہیں.. شام کی صورت حال اسی کا ایک حصہ ہے جہاں ایران فیصلہ کن کردار ادا کر رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں