.

امریکی وزیر خارجہ قطر بحران پر مذاکرات کرنے کویت پہنچ رہے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر بحران کی اہمیت اور اس سے امریکا کو لاحق ہونے والی تشویش کے پیش نظر امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹیلرسن پیر کے روز کویت پہنچ رہے۔ کویت خلیجی ملکوں اور مصر کے درمیان پیدا ہونے والے تنازع کے حل میں ثالث کا کردار ادا کر رہا ہے۔

دفتر خارجہ کے مطابق ٹیلرسن خلیج تنازع کے حل کے سلسلے میں کی کوششوں پر تبادلہ خیال کے لئے اعلی کویتی عہدیداروں سے ملاقاتیں کریں گے۔

یاد رہے کہ جرمن شہر ہیمربرگ میں گزشتہ جمعہ اور ہفتے کے روز ہونے والا جی 20 ممالک کے دو روزہ سمٹ میں بھی دوحا کی جانب سے خلیجی ممالک کی طرف سے دہشت گردی ختم کرنے سے متعلق مطالبات مسترد کیے جانے کی بازگشت سنائی دیتی رہی ہے۔

سمٹ کی موقع پر امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹیلرسن اور ان کے سعودی ہم منصب عادل الجبیر کے درمیان ملاقات ہوئی جس میں قطر بحران کے حوالے سے ہونے والی تازہ پیش رفت کا جائزہ لیا گیا۔

مسٹر ٹیلرسن نے ملاقات کے بعد ایک بیان میں کہا تھا کہ ’’ہم کویت کی ثالثی کی حمایت کرتے ہیں اور مل کر دہشت گردی کی فنڈنگ جیسے امور پر توجہ مرکوز رکھنا چاہتے ہیں۔‘‘

ایک ملتی جلتی پیش رفت میں امریکی وزارت خارجہ نے واضح کیا ہے کہ ’’واشنگٹن کو خلیجی بحران کی طوالت پر تشویش ہے۔‘‘

درایں اثنا مصری وزیر خارجہ شامح شکری نے اپنے ملک سمیت سعودی عرب، یو اے ای اور بحرین کے اس عزم کا اعادہ کیا ہے کہ وہ ملکر قطر کو دہشت گردوں کو مالی معاونت جیسی پالیسیاں اور اقدامات ترک کرنے پر مجبور کر دیں گے جس کی وجہ سے خطے کا امن اور سکون خطرے میں ہے۔

مصری وزیر خارجہ نے ان خیالات کا اظہار یورپی یونین کی سیکیورٹی اور فارن پالیسی کی نمائندہ فیڈریکا مجرینی سے ٹیلی فون پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے کیا۔ دونوں رہنماوں نے قطر کی مسلسل انکار کی وجہ سے پیدا ہونے والی بحرانی صورتحال کا بھی تفصیلی جائزہ لیا۔ مسز مجرینی نے دہشت گردی کے گرد گھیرا تنگ کرنے سے متعلق مصری کوششوں کی تعریف کی۔