.

خلیفہ حفتر نے سیف الاسلام قذافی کو "بے چارہ" قرار دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کی قومی فوج کے سربراہ خلیفہ حفتر نے سیف الاسلام قذافی کو بے چارہ قرار دے کر اُن لیبیائی حلقوں کی کوششوں کی اہمیت کم کر دی ہے جو سابق صدر معمر قذافی کے بیٹے کی آئندہ صدارتی انتخابات میں نامزدگی کے لیے کوشاں ہیں۔

فرانسیسی اخبار Jeune Afrique سے گفتگو کرتے ہوئے حفتر نے کہا کہ لیبیا میں بعض سادہ لوح افراد اب بھی سیف الاسلام قذافی پر یقین رکھتے ہیں۔

حفتر نے ملک میں قانون ساز انتخابات کے انعقاد کو اولین ترجیح قرار دیا تا کہ موجودہ ذمّے داران کو اپنے مفادات کے موافق آئین تحریر کرنے سے روکا جا سکے۔

اخبار سے گفتگو میں حفتر نے ایک مرتبہ پھر لیبیا میں قومی وفاق کی حکومت کے وزیراعظم فائز السراج پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ وہ طرابلس میں ملیشیاؤں کے ہاتھوں یرغمال بنے ہوئے ہیں اور فیصلے کرنے پر قادر نہیں۔

حفتر جو سیاسی راستے کے لیے اپنی سپورٹ باور کرا چکے ہیں انہوں نے اپنے اس اعلان کے ذریعے عسکری آپشن کا عندیہ دیا ہے کہ "لیبیا جمہوریت کے لیے تیار نہیں ہے"۔

ادھر لیبیا میں انتخابات سے متعلق سپریم نیشنل کمیشن کے سربراہ عماد السائح نے توقع ظاہر کی ہے کہ رواں برس انتخابی دوڑ میں غیر مسبوق نوعیت کا مقابلہ دیکھنے میں آئے گا۔ انہوں نے انتخابات میں کسی قسم کی خلاف ورزی کے واقع ہونے کو خارج از امکان قرار دیا۔