.

حوثی لیڈر خطرناک کیڑے مارادویات یمن اسمگل کرنے کے مرتکب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے دارالحکومت صنعاء میں حوثی باغیوں کی پارلیمنٹ میں پیش کی گئی ایک رپورٹ میں چونکا دینے والا انکشاف کیا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ حوثی لیڈر بیرون ملک سے خطرناک نوعیت کی کیڑے مار اسپرے اور ادویات یمن اسمگل کرنے کے مرتکب ہوئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سنہ 2015ء سے 2017ء کے دوران حوثیوں نے 429 ٹن ممنوعہ اور خطرناک کیڑے مار اسپرے یمن منتقل کی جس نے ملک کو زہرآلود کرکے رکھ دیا ہے۔

حوثیوں کے اپنے ایک رکن پارلیمان احمد سیف حاشد نے کہا کہ دغسان فاؤنڈیشن جو ایک حوثی لیڈر دغسان احمد دغسان کی ملکیت میں قائم ہے تین سال کے دوران 251 ٹن خطرناک کیڑے مار اسپرے بیرون ملک سے اسمگل کرنے کی ذمہ دار ہے۔ اس کے بعد دوسرے نمبر پر صالح عجلان نامی حوثی لیڈر ہیں جنہوں نے 115 ٹن ممنوعہ کیڑے مار سامان بیرون ملک سے منگوایا اور اسے استعمال کیا گیا۔

الحاشد کا کہنا ہے کہ حوثی لیڈر ممنوعہ، زاید المیعاد اور آلودگی پھیلانے والی زرعی ادویات اسمگل کرکے سرکاری اداروں کی نگرانی اور جانچ پڑتال کو دیوار پر مار رہےہیں۔ رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ بیرون ملک سے ممنوعہ زرعی ادویات کی اسمگلنگ کے بعد وزارت زراعت کےتحفظ نباتات ادارے کی سرگرمیاں بھی مکمل طورپر ختم ہوچکی ہیں۔

رپورٹ میں بیرون ملک سے ممنوعہ زرعی ادویات کی اسملنگ کی روک تھام اور زہریلی کیڑے مار اسپرے کے استعمال کی تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مضر صحت کیڑے مار ادویات کے استعمال سے انسان،حیوان اور نباتات سب بری طرح متاثر ہورہے ہیں۔