’الامبیق‘ جس کے ذریعے طائف کے گلابوں کا عرق کشید کیا جاتا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے علاقے طائف میں کاشت ہونے والے گلاب سےاس کا عطر کشید کرنے کا کام برسوں پرانا ہے۔ مقامی سطح پر اسے’الامبیق‘ کہا جاتا ہے۔

’الامبیق‘ طائف میں تیار ہونے والی گلاب کی مصنوعات کی صنعت کے ساتھ قریبی تعلق رکھتا ہے۔ کیونکہ کسان اسے عطر اور پھولوں کا امرت نکالنے، طائف شہر کے آسمان کو خوشبو سے معطر کرنے اور رونق بڑھانےکے لیے استعمال کرتے ہیں۔

شاہ سعود یونیورسٹی کے شعبہ کیمسٹری کے ایک فیکلٹی ممبر ڈاکٹر احمد الغامدی نے وضاحت کی کہ الامبیق دو حصوں پر مشتمل ایک برتن نما آلہ ہوتا ہے۔ پہلا ایک کشید برتن ہے اور دوسرا شیشے یا تانبے کا برتن ہے جس میں کشید کیا جانے والا مواد جمع کیا جاتا ہے۔اسے بالعموم پھولوں کا عرق نکالنے کے لیےاستعمال کیا جاتا ہے۔ طائف میں یہ گلاب کی خوشبو حاصل کرنے کا روایتی طریقہ ہے۔اس کے ذریعے برتن کے اندر پانی کو گرم کیا جاتا ہے۔پودوں کے مواد سے آسانی سے غیر ضروری نامیاتی مادے کے بخارات بنتے ہیں۔ ڈسٹلیشن اپریٹس (الامبیق) کا دوسرا حصہ جو ڈسٹلیشن ہیڈ یا کولنگ ٹیوب ہے جس میں خوشبودار بخارات کو گاڑھا کرنے اور کشید کرنے کا عمل مائع بوندوں میں ہوتا ہے جو شیشے کے برتن میں جمع ہوتے ہیں۔

جدید دور میں عرق نکالنے کی ڈیوائس کے کام کو زیادہ درست طریقے سے کنٹرول کرنے کے لیے تیار اور بہتر کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ اس میں پانی کے علاوہ دیگر سالوینٹس کا استعمال علاحدگی اور کشید کے عمل میں کیا جاتا ہے۔

طائف کے گلاب کی پرفیوم کی صنعت

سعودی پریس ایجنسی (ایس پی اے)کی رپورٹ کے مطابق طائف کے گلاب کی مصنوعات کی تیاری کے لیے الامبیق کا استعمال صدیوں پرانا ہے۔ یہ آلہ طائف میں گلاب کے پھولوں سے عرق نکالنے کے لیے ایک پیشہ ورانہ چیز ہے۔ طائف کے گلاب کا عطر اور ڈسٹلیشن ڈیوائس کا سب سے بڑا مقصد گلاب کے تیل کو اس کے موسم کے ساتھ ساتھ نکالنا تھا۔

الطائف گورنری گلاب کی کاشت اور پیداوار کے لیے مشہور ہے جو عرب دنیا میں سب سے زیادہ استعمال ہونے والا عطر ہے۔

جبال ھدیٰ، الشفا، وادی محرم، الطلحات اور بلاد طویرق طائف میں المخاضہ گلاب کی پیداوار میں نمایاں مقام رکھتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں