اسرائیل نے ایران اور حزب اللہ کے ہیکروں پر حملے کی دھمکی دے دی

حزب کے ہیکر اقوام متحدہ امن مشن کی معلومات تک رسائی کے لیے تیاری کر چکے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل نے ایرانی حمایت یافتہ لبنانی ملیشیا پر الزام لگایا ہے کہ اقوام متحدہ کی امن مشن کی سرگرمیوں میں رکاوٹ ڈالنے کے لیے حزب اللہ نے سائبر کارروائیاں کرنے کی تیاری کی ہے۔ اس کے جواب میں اسرائیل نے دھمکی دی ہے کہ ہیکروں کو سخت جواب دیا جائے گا۔

اسرائیل کی اس دھمکی اور الزام کا لبنا ن سے کوئی فوری رد عمل نہیں آیا ہے۔ نہ ہی اس بارے میں ایران اور اقوام متحدہ کی لبنان میں موجود ''انٹیرم فورسز '' ( یو این آئی ایف آئی ایل ) کی جانب سے کوئی موقف سامنے آیا ہے۔ تاہم ایران اسرائیل کشیدگی میں مزید اضافہ ہو سکتا ہے۔ یہ اسرائیل کی طرف سے اس چیز کا عوامی سطح پر کیا جانے والا پہلا اظہار ہے۔

اسرائیلی وزیر دفاع بینی گنٹز کی طرف سے لگائے الزام کے مطابق '' ایران کے سکیورٹی معاملات میں شریک حزب اللہ نے ہیکروں کی مدد سے 'یو این آئی ایف آئی ایل ' کے آپریشنز اور اس عالمی فوج کی زمین پر تعینات کیے جانے سے متعلق معلومات تک رسائی کے لیے مہم شروع کی ہے۔ ''

انہوں نے اپنے الزام میں اسے ایران اور اس کی حمایت یافتہ حزب اللہ کی طرف سے لبنانی عوام اور لبنان کے استحکام پر بھی ایک اور حملہ قرار دیا۔ اسرائیلی وزیر نے یہ الزام تل ابیب یونیورسٹی میں سائبر کانفرنس سے خطاب کے دوران لگایا ہے۔

واضح رہے اقوام متحدہ کی امن فوج 1978 سے لبنان کی جنوبی سرحد پر نگرانی کے لیے گشت پر مامور ہے۔ یہ اس جنگ بندی کی مانیٹرنگ کی بھی ذمہ دار جو 2006 کی حزب اللہ اسرائیل جنگ میں ٹوٹ گئی تھی۔

اسرائیل نے حزب اللہ پر الزام لگاتا ہے کہ اس کے مسلح لوگ سرحدی علاقے میں اقوام متحدہ کے ادارے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اپنی پوزیشنیں قائم کررہے ہیں۔ جبکہ لبنان کا اسرائیل کے بارے میں کہنا ہے کہ اسرائیل اس علاقے سے فضائی خلاف ورزیاں کرتا ہے۔

گینٹز نے مزید کہا ایرانی پاسداران انقلاب کے سائبر یونٹ بحری جہازوں کی تباہی کے لیے سائبر تحقیقاتت کرچکا ہے۔ اسی طرح گیس سٹیشن اور مغربی ملکوں کے صنعتی پلانٹ بھی اس کے ہدف میں ہیں۔ ان اہداف میں فرانس اور برطانیہ کے علاوہ اسرائیلی کی تنصیبات بھی شامل ہیں۔ ''

خیال رہے اسی طرح کے الزامات برطانیہ نے پچھلے سال سکائی نیوز کے ذریعے لگائے تھے مگر ایران نے کوئی جواب نہیں دیا تھا۔ اس پس منظر میں اسرائیلی وزیر نے کہا ''اسرائیل ان ہیکروں پر براہ راست حملہ بھی کر سکتا ہے۔ '' کیونکہ ان ہیکروں کا بھی علم ہے اور یہ بھی جانتے ہیں کہ انہیں کون ہدایات دیتا ہے۔''

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں