قذافی کے انٹیلی جنس چیف کے بیٹے کو گولیاں مار کر قتل کردیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لیبیا کے کرنل معمر قذافی کے دور میں انٹیلی جنس ادارے کے سربراہ عبداللہ السنوسی کے بیٹے کو نامعلوم مسلح افراد نے گولیاں مار کر قتل کردیا ہے۔

آج بدھ کو العربیہ اورالحدیث کے ذرائع نے سبھا میں محمد السنوسی کی موت کی اطلاع دی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ محمد السنوسی کی لاش الگ الگ جگہوں سے زخمی حالت میں ملی۔

دیگر ذرائع نے اشارہ کیا کہ یہ جرم السنوسی اور اس کے کزن کے درمیان خاندانی جھگڑے کا نتیجہ ہے جس کی وجہ سے اسے کئی بار وار کیے گئے۔

سنوسی جونیئر کو آخری باردسمبر 2022 میں دیکھا گیا تھا جب اس نے دھمکی دی تھی کہ اگر حکومت نے ان کے والد اور ان کے ساتھیوں کو رہا نہ کیا تو وہ جنوبی لیبیا کے تمام سرکاری اداروں کو بند کر دے گا۔

کئی مہینوں سے عبداللہ السنوسی کا خاندان اس کی رہائی کے لیے دباؤ ڈال رہا ہے. السنوسی کے خاندان کو خدشہ ہے کہ حکومت انہیں ابو عجیلہ مسعود المریمی کی طرح امریکا کے حوالے نہ کردے کیونکہ المریمی کی طرح السنوسی پربھی لاکربی طیارے میں بم حملے کا الزام عاید کیا جاتا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ 72 سالہ سنوسی کا تعلق جنوبی لیبیا کے المقارحہ قبیلے سے ہے اور ان پر 2011 میں سابقہ حکومت کا تختہ الٹنے والے فروری کے انقلاب کو دبانے سے متعلق ایک کیس میں مقدمہ چلایا جا رہا ہے۔

عبداللہ السنوسی لیبیا کے مقتول لیڈر کرنل معمر قذافی کے برادر نسبتی ہیں۔ ان کے بیالیس سالہ دور اقتدار میں وہ کرنل قذافی کے انتہائی قریبی اور قابل اعتماد ساتھیوں میں شمار ہوتے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں