22 برسوں میں اسرائیلی کے جنین پر فضائی حملے، تین فلسطینی شہید

22 فلسطینی زخمی ہو گئے، 6 اسرائیلی فوجی بھی زخمی، اسرائیلی نشانچی فلسطینی گھروں کی چھت پر چڑھ گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل کی جانب سے فلسطینیوں کے خلاف جارحیت میں اضافہ دیکھا گیا اور ایک اس حوالے سے ایک نئی شدت سامنے آئی کہ اسرئیل نے 22 سالوں میں پہلی مرتبہ جنین پر بھی فضائی حملہ کیا ہے۔ اسرائیلی فورسز نے آج بروز پیر جنین پناہ گزین کیمپ میں جابریات محلے پر چھاپہ مارا اور فلسطینیوں پر فائرنگ کی کارروائیوں کے ذمہ دار ہونے کا الزام لگاتے ہوئے کے ایک گھر کو گھیرے میں لے لیا۔

’’العربیہ‘‘ کے نمائندے کے مطابق اس وقت پورے کیمپ میں پرتشدد جھڑپیں شروع ہو گئیں جب اسرائیلی نشانچی فلسطینی شہریوں کو نشانہ بنانے کے لیے کچھ گھروں کی چھتوں پر چڑھ گئے۔ اس دوران اسرائیل کے اپاچی ہیلی کاپٹروں نے 22 سالوں میں پہلی بار جینن پر بمباری کر دی۔

 جینین 6-19-2023 (رائٹرز)
جینین 6-19-2023 (رائٹرز)

دوسری جانب فلسطینی مزاحمت کاروں نے جوابی کارروائی میں گولیاں برسائیں اور گھریلو ساختہ دھماکہ خیز مواد استعمال کیا۔ یہ مواد انہوں نے کیمپ کی گلیوں اور آس پاس کی گلیوں میں نصب کر رکھا تھا۔ اس کے نتیجے میں 6 اسرائیلی فوجی زخمی ہو گئے.

اسرائیلی میڈیا نے خبر دی ہے کہ لڑائی میں متعدد اسرائیلی فوجی زخمی ہوئے ہیں۔ فوج نے کہا، "جیسے ہی سکیورٹی فورسز شہر سے باہر نکلیں، ایک فوجی گاڑی کو دھماکہ خیز مواد سے اڑانے کی کوشش کی گئی، جس سے گاڑی کو نقصان پہنچا،" فوج نے مزید کہا کہ ہیلی کاپٹروں نے "فورسز کو علاقے سے نکالنے میں مدد کے لیے بندوق برداروں پر فضا سے راکٹ فائر کیے۔"

جینن سے ایک غیر مصدقہ ویڈیو فوٹیج میں اسرائیلی فوجی ہیلی کاپٹر کو جاری فوجی آپریشن کے دوران راکٹ داغتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ اسرائیلی فوج مقبوضہ مغربی کنارے میں اپنی کارروائیوں میں شاذ ونادر ہی فضائیہ کو استعمال کرتی ہے۔

دریں اثنا فلسطینی وزارت صحت نے اعلان کیا ہے کہ پیر کو پو پھٹنے کے وقت شروع کی گئی اس کارروائی میں کم سے کم 22 افراد زخمی ہوئے اور ایک بچے سمیت 3 افراد شہید ہو گئے ہیں۔

فلسطینی وزارت صحت نے ہلاک ہونے والوں کی شناخت 21 سالہ خالد عصعصہ، 29 سالہ قسام ابو ساریہ اور 15 سالہ احمد صقر کے نام سے کی ہے اور کہا ہے کہ فائرنگ کے تبادلے میں کم از کم چھ دیگر شدید زخمی ہوئے۔

آج جنین سے
آج جنین سے

یہ جھڑپیں ایسے وقت میں ہوئی ہیں جب تل ابیب اور فلسطینی اتھارٹی کے درمیان کشیدگی میں پہلے ہی اضافہ ہو گیا ہے۔ اسرائیلی حکومت کی جانب سے اتوار کو مغربی کنارے کے مختلف علاقوں میں 4 ہزار 560 ہاؤسنگ یونٹس کی تعمیر کو اسرائیلی سپریم پلاننگ کونسل کے ایجنڈے میں شامل کرنے کے منصوبے کی منظوری دیدی جس سے فلسطینیوں میں بھی غصہ کی لہر دوڑ گئی ہے۔

اس پر رد عمل دیتے ہوئے فلسطینی حکام نے زور دیا ہے کہ فلسطینی مشترکہ اقتصادی کمیٹی کے اجلاس کا بائیکاٹ کریں گے۔ یہ اجلاس آج پیر کو ہونا ہے۔

اسرائیل اور فلسطینی کئی مہینوں کے تشدد کی لپیٹ میں ہیں، جن کا مرکز مغربی کنارا ہے، جہاں اس سال تقریباً 120 فلسطینی شہید اور 20 اسرائیلی اور متعدد غیر ملکی شہری ہلاک ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں