ڈیوٹی کے دوران گاڑی کی ٹکر سے زخمی اردنی ٹریفک سارجنٹ چل بسا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن میں ڈیوٹی کے دوران ایک ڈرائیور کی لاپرواہی سے گاڑی چلانے کے نتیجے میں زخمی ہونے والا ٹریفک سارجنٹ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔

ٹریفک سارجنٹ موسیٰ محمد المصری دارالحکومت عمان کے نواحی علاقے جبیھہ اور شمالی صویلح کے مقام پر سڑک پر ٹریفک کنٹرول کرتے ہوئے اس وقت زخمی ہوگیا تھا جب اس نے ایک کار کو روکنے کا اشارہ کیا تو ڈرائیور نے کار روکنے کے بجائے اس کی رفتار مزید بڑھا دی اور اسے گاڑی کی ٹکر مارنے کے بعد فرار ہوگیا تھا۔

سارجنٹ بھاگتے ہوئے
سارجنٹ بھاگتے ہوئے

اس واقعے میں ٹریفک سارجنٹ محمد المصری شدید زخمی ہوگیا تھا جسے علاج کے لیے ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔

عینی شاہدین نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ مرحوم مصری سارجنٹ نے عمان کے شمال میں جبیھہ اور صویلیح کے درمیان ایک علاقے میں ریسکیو گشت کی سرکاری ڈیوٹی کے دوران ایک چھوٹی الیکٹرک گاڑی کے ڈرائیور کو رکنے کو کہا، لیکن گاڑی کے مالک نے تعمیل کرنے سے انکار کر دیا اور گاڑی اس پر چڑھا دی اور جائے حادثہ سے فرار ہو گیا۔

مرحوم پولیس والا
مرحوم پولیس والا

پولیس اہلکار کو فوری طور پر الحسین میڈیکل سٹی منتقل کیا گیا۔ وہ کئی دنوں تک انتہائی نگہداشت کے یونٹ میں داخل رہا، لیکن اس کی خراب صحت اور زخموں اور فریکچر کی وجہ سے وہ منگل کو زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔

پولیس نے ملزم کو گرفتار کرلیا ہے۔ اس پر اقدام قتل کا مقدمہ دائر کیا گیا تھا تاہم پبلک پراسیکیوٹر نے ڈرائیور پر کی سوچی سمجھی کوشش کا الزام عاید کیا ہے۔ سارجنٹ موسیٰ محمد المصری کی وفات کے بعد ملزم کے خلاف قتل کا مقدمہ چلایا جائے گا۔

مرحوم سارجنٹ کی تدفین کی تقریب
مرحوم سارجنٹ کی تدفین کی تقریب

مقتول سارجنٹ کے اہل خانہ نے مطالبہ کیا کہ ’لاپرواہ‘ ڈرائیور پر قانون کا سختی سے اطلاق کیا جائے اور اس پر سخت ترین سزائیں عائد کی جائیں، تاکہ وہ دوسروں کے لیے عبرت کا نشان بن جائے۔حادثے میں فوت ہونے والے سارجنٹ کے پسماندگان میں پانچ بچے اور ایک بیوہ ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں