نیویارک میں سعودی آرکسٹرا کے شاہکاروں میں "ڈرم" موسیقی آلے کے طور پر شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی شہر نیویارک میں اوپیرا ہاؤس تھیٹرمیں منعقدہ موسیقی پروگرام میں سعودی آرکسٹرا کے شاہکار کنسرٹ کے دوران ’ڈرم‘ موسیقی کے آلے کے طور پر پیش کیا گیا۔

سعودی عرب کے ایک عوامی موسیقی بینڈ نے کنسرٹ میں موسیقی کے آلے کے طور پر "البرامیل"[ڈرم] کو متعارف کرایا، جسےسوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر بہت زیادہ پذیرائی حاصل ہوئی۔

آرٹ کے نقاد محمد سلامہ نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ ڈھول اور دیگر چیزیں قدیم زمانے سے گانے بجانے کی ایک شکل کے طور پر استعمال ہوتی رہی ہیں اورگاڑیوں کے تیل کی ٹینکیاں بھی ساز کو بنانے کے لیے استعمال کی جاتی رہی ہیں۔

سعودی نیشنل کورل آرکسٹرا اور سعودی پرفارمنگ آرٹس بینڈ نے امریکی جاز بینڈ ڈیزی گلیسپی کے ساتھ مل کر امریکا کے شہر نیویارک کے لنکن سینٹر میں میٹروپولیٹن اوپیرا ہاؤس کے اسٹیج پر ایک کنسرٹ کیا۔

وزیر ثقافت اور مملکت کے سفیر کی موجودگی
وزیر ثقافت اور مملکت کے سفیر کی موجودگی

اس تقریب میں سعودی وزیر ثقافت شہزادہ بدر بن فرحان، امریکہ میں سعودی سفیر شہزادی ریما بنت بندر اور سعودی انٹیلی جنس کے سابق سربراہ شہزادہ ترکی الفیصل نے شرکت کی۔

سعودی کوئر نے نیویارک اوپیرا ہاؤس میں سعودی آرکسٹرا کے شاہکار کنسرٹ میں "أشرقت شمس المجدد.. جددت عهد الموحد" گیت پیش کیا۔

سعودی آرکسٹرا کے شاہکار
سعودی آرکسٹرا کے شاہکار

اس تقریب کا انعقاد میوزک اتھارٹی نے تھیٹر اینڈ پرفارمنگ آرٹس اتھارٹی کے تعاون سے وزیر ثقافت شہزادہ بدر بن عبداللہ بن فرحان کی سرپرستی میں کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں