بی بی سی قاہرہ کے عملہ کا متعدد ہڑتالوں کے بعد اُجرتوں اور مراعات کے معاہدے پراتفاق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی لندن کی انتظامیہ نے قاہرہ کے دفتر میں اپنے عملہ کو زیادہ تن خواہیں اور ضروری مراعات دینے پر اتفاق کیا ہے۔

یہ معاہدہ جون 2023 میں بی بی سی کی مالیاتی پالیسیوں میں امتیازی سلوک کے خلاف شروع ہونے والے مظاہروں کے سلسلے کے بعد طے پایا ہے۔

مذاکراتی عمل میں موجود مصری صحافیوں کے سنڈیکیٹ کے سربراہ خالد البلشی نے اہرام آن لائن سے بات کرتے ہوئے اس بات کی تصدیق کی کہ "نئے قواعد و ضوابط میں انٹری لیول کے عہدوں کے لیے معاوضے میں 75 سے 142 فی صد تک اضافہ کیا جائے گا، ساتھ ہی تمام ملازمین کے لیے مساوی نقل و حمل الاؤنس اور رات کی شفٹ میں کام کرنے والے کارکنوں کو ڈبل الاؤنس دیے جائیں گے۔

خالد البلشی نے کہا کہ اس معاہدے کے تحت ہر ملازم کی بی بی سی اسپانسرڈ ہیلتھ انشورنس میں اضافہ کیا جائے گا تاکہ خاندان کے ایک اضافی رکن کا احاطہ کیا جا سکے۔اس کے علاوہ، بی بی سی کی انتظامیہ نے ان ممالک میں معاشی کساد سے نمٹنے کے لیے اپنی "غیر مستحکم مارکیٹوں" کی پالیسی پر نظرثانی کرنے کا فیصلہ کیا ہے جہاں وہ کام کرتا ہے۔

سنڈیکیٹ کے مطابق یہ جائزہ دسمبر 2023 تک مکمل کر لیا جائے گا۔تاہم اسے فوری طور پر بی بی سی قاہرہ میں نافذ کیا جائے گا۔

بی بی سی نیوز 44 ممالک میں 58 مقامات پر کام کرتا ہے اور افراط زر کے حساب سے اپنے ملازمین کی تن خواہوں کو ایڈجسٹ کرتا رہتا ہے۔

واضح رہے کہ مصر مالی بحران کی زد میں ہے اور اس کی 10 کروڑ 90 لاکھ آبادی کا قریباً ایک تہائی حصہ غُربت کی زندگی گزار رہا ہے۔مصری معیشت حالیہ برسوں میں حکومت کے کفایت شعاری کے اقدامات، کرونا وائرس کی وَبا اور یوکرین جنگ کے اثرات سے نمٹ رہی ہے۔مصر روس اور یوکرین سے گندم درآمد کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے۔

سرکاری مرکزی ایجنسی برائے موبلائزیشن اور شماریات کے اعداد و شمار کے مطابق جون میں افراط زر کی سالانہ شرح 36.8 فی صد تک پہنچ گئی تھی جو گذشتہ چند ماہ میں 33.7 فی صد تھی۔نیزگذشتہ ایک سال کے دوران میں مصری پاؤنڈ کی قدر میں ڈالر کے مقابلے میں 50 فی صد سے زیادہ کمی واقع ہوئی ہے۔

بی بی سی قاہرہ کے عملہ نے اپنے مطالبات منوانے کے لیے بتدریج ہڑتال شروع کی اور اس سال جون میں پہلی ہڑتال کی تھی۔اس کے بعد اس نے جولائی میں تین روزہ ہڑتال اورپھر اگست میں 10 دن کی ہڑتال کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں