امریکہ نے یمن سے داغے گئے متعدد حملہ آور ڈرونز کو روک لیا: پینٹاگون

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی سینٹرل کمانڈ (سینٹ کام) نے کہا کہ بحیرۂ احمر میں گشت کرنے والے ایک امریکی جنگی جہاز نے جمعرات کو یمن میں حوثیوں کے زیرِ قبضہ علاقوں سے داغے گئے متعدد حملہ آور ڈرونز کو روک لیا۔

23 سینٹ کام نے ایکس (سابقہ ٹویٹر) پر ایک پوسٹ میں کہا۔ "نومبر کی صبح (یمن کے وقت) پر یو ایس ایس تھامس ہڈنر (ڈی ڈی جی 116) نے یمن میں حوثیوں کے زیرِ قبضہ علاقوں سے داغے گئے متعدد یک طرفہ حملہ آور ڈرونز کو مار گرایا۔"

اس نے مزید کہا۔ "جہاز اور عملے کو کوئی نقصان نہیں پہنچا۔"

حوثیوں نے خود کو ایران کے اتحادیوں اور پراکسی کے "محورِ مزاحمت" کا حصہ قرار دیا ہے اور غزہ میں جنگ کے آغاز کے بعد اسرائیل کی طرف ڈرون اور میزائل حملوں کا ایک سلسلہ شروع کر رکھا ہے۔

حوثیوں نے ایرانی حمایت یافتہ حماس کے ساتھ ملک کی جنگ میں اسرائیلی جہاز رانی کو نشانہ بنانے کی بھی دھمکی دی ہے۔

اتوار کے روز حوثیوں نے بحیرۂ احمر کے داخلی راستے پر اسرائیل سے منسلک ایک کارگو بحری جہاز اور اس کے بین الاقوامی عملے کے 25 ارکان پر قبضہ کر لیا۔

اتوار کے روز اسرائیلی فوج نے کہا کہ یہ قبضہ "عالمی سطح پر نتائج و اثرات پیدا کرنے والا ایک انتہائی سنگین واقعہ" تھا اور ایک امریکی فوجی اہلکار نے کہا، یہ "بین الاقوامی قانون کی صریح خلاف ورزی ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں