اسرائیلی فوج کا غزہ میں قیدیوں کی تلاش کے لیے قبریں اکھاڑنے کا اعتراف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سوشل میڈیا پر اسرائیلی فوجی گاڑیوں اور بلڈوزروں کے جنوبی غزہ کے شہر خان یونس کے قبرستانوں میں گھومنے اور قبریں اکھاڑنے کی ویڈیوز سامنے آنے کے بعد اس حوالے سے اسرائیلی فورسز کا رد عمل سامنے آیا ہے۔

قبریں اکھاڑنے کے واقعات

گذشتہ ہفتے اسرائیلی فورسز نے خان یونس کے ایک بڑے قبرستان کو شدید نقصان پہنچایا، لاشوں کو نکالا، ان کی بے حرمتی کی اور انہیں گاڑیوں میں ڈال کر دوسرے مقامات پر منتقل کیا گیا، جس پر پیمانے پر غم و غصے کی لہر دوڑ گئی تھی۔

اس کے بعد اسرائیلی فوج نے ایک بیان جاری کیا جس میں اس نے وضاحت کی کہ اس نے غزہ میں واقع قبروں کو کھولا اور ان سے لاشیں نکالی تھیں۔

امریکی ٹی وی چینل ’سی این این‘ کی رپورٹ کے مطابق قبریں کھولنے کا مقصد غزہ میں یرغمال بنائے گئے اسرائیلیوں کی لاشوں کی شناخت کرنا تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ 7 اکتوبر کے اچانک حملوں کے دوران حماس کے زیر حراست قیدیوں کی باقیات کی تلاش کا ایک آپریشن تھا۔

یہ بیان اس وقت سامنے آیا جب قبرستان کو بلڈوز کرنے کے بعد اس کی فوٹیج میں دکھایا گیا تھا کہ قبروں کو شدید نقصان پہنچا اور کئی قبروں کا نام و نشان مٹ گیا۔ بلڈوزروں کی مدد سے اکھاڑی گئی قبروں کے ساتھ قبرستان میں ہر طرف انسانی باقیات بکھری دیکھی جا سکتی ہیں۔

فوج نے کہا کہ یہ کارروائی اہم انٹیلی جنس معلومات موصول ہونے کے بعد سامنے آئی۔ ان معلومات میں بتایا گیا تھا کہ خان یونس میں لڑائی کے دوران متعدد اسرائیلی یرغمالیوں کے مارے جانے کے بعد ان کی تدفین کا امکان تھا۔

قیدیوں کی لاشیں!

قابل ذکر ہے کہ قیدیوں کا بحران اسرائیل کو درپیش سب سے نمایاں مسئلہ ہے کیونکہ غزہ میں اس کی کارروائیاں ان قیدیوں کی تلاش کے لیے جاری ہیں۔

جمعرات کو اسرائیلی فوج نے اعلان کیا کہ قیدیوں کو بچانا، ان کی لاشوں کو تلاش کرنا اور انہیں واپس لانا غزہ میں ان کے اہم اہداف میں سے ایک ہے اور اسی وجہ سے لاشوں کو قبرستان سے ہٹایا گیا۔

اسرائیلی فوج کے ایک ترجمان نے امریکی نیٹ ورک میں مزید بتایا کہ قیدیوں کی شناخت کا عمل ایک محفوظ اور متبادل جگہ پر ہوتا ہے۔ جب ان لاشوں کی شناخت کرلی جاتی ہے کہ وہ اسرائیلی قیدیوں کی نہیں ہیں تو انہیں انسانی احترام کے مطابق واپس دفن کردیا جاتا ہے۔

تاہم اسرائیلی فوج نے یہ نہیں بتایا کہ قبرستان مسماری آپریشن میں اسے کسی اسرائیلی یرغمالی کی لاش ملی ہے یا نہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں