فلسطین اسرائیل تنازع

رفح میں فوجی آپریشن نہ کیا تو حماس کے خلاف جنگ ہار جائیں گے: نیتن یاھو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے کہا ہے کہ اسرائیلی فوج کو رفح شہر میں جلد اپنا آپریشن کرنا چاہیے۔ اگر ایسا نہیں کیا جاتا تو اس کا مطلب حماس کے خلاف "جنگ ہارنا" ہو گا۔

نیتن یاہو نے یروشلم میں ایک پریس کانفرنس پر زور دیا کہ غزہ کی پٹی میں یرغمالیوں کی رہائی کے لیے حماس کے ساتھ معاہدہ ہونے کے باوجود رفح آپریشن پر عمل درآمد کیا جائے گا۔

اسرائیلی وزیر اعظم نے کہا کہ انہوں نے امریکی صدر جو بائیڈن کی درخواست پر قاہرہ میں ہونے والے جنگ بندی کے مذاکرات کے لیے مذاکرات کار بھیجے تھے، لیکن مذاکرات میں کوئی پیش رفت نہیں ہوئی کیونکہ حماس کے مطالبات ایک طرح کی "خیالی" نوعیت کے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ جب تک حماس اپنے مطالبات کو تبدیل نہیں کرتی مذاکرات جاری رکھنے کا کوئی فائدہ نہیں۔

نیتن یاہونے صحافیوں کو جاری ایک بیان میں کہا کہ فلسطینیوں کے ساتھ توسیع شدہ سفارتی معاہدہ بغیر کسی پیشگی شرائط کے براہ راست مذاکرات کے ذریعے طے نہیں کیا جا سکتا۔

"تفصیلی منصوبہ"

اس سے قبل آج اسرائیلی میڈیا نے کہا کہ فوج اگلے ہفتے سیاسی قیادت کو جنوبی غزہ کی پٹی میں رفح پر حملہ کرنے کا تفصیلی منصوبہ پیش کرے گی۔

ٹائمز آف اسرائیل نے چینل 12 کی ایک رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے اطلاع دی ہے کہ اس منصوبے میں بہ ظاہر رفح کے رہائشیوں کو جنوبی اور وسطی غزہ کی پٹی کے دیگر علاقوں میں منتقل کرنا شامل ہے لیکن اس میں انہیں شمالی غزہ کی پٹی میں منتقل کرنا شامل نہیں ہے۔

اخباری رپورٹ کے مطابق وزیر دفاع یوآو گیلنٹ اور دفاعی کونسل کے وزیر بینی گینٹز کا خیال ہے کہ اگر اگلے مارچ سے شروع ہونے والے رمضان کے مہینے تک قیدیوں کے حوالے سے کوئی معاہدہ نہیں ہوتا ہے تو فوج کو رفح میں داخل ہونا چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں