حماس کےساتھ قیدیوں کے تبادلے کےمعاہدے پررمضان سےقبل دستخط کیےجائیں گے:اسرائیلی میڈیا

اسرائیل، مصر، قطر اور امریکہ نے عارضی جنگ بندی کا اعلان کرنے کے لیے قیدیوں کے معاہدے کی "بنیادی خصوصیات" پر سمجھوتہ کیا: جیک سلیوان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی براڈکاسٹنگ کارپوریشن نے بدھ کے روز کہا کہ حماس اور اسرائیل کے درمیان متوقع قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے میں مصری اور قطری ثالثوں نے تصدیق کی ہے کہ تبادلے کے معاہدے پر دستخط اگلے مارچ کی دس تاریخ سے پہلے ہو جائیں گے۔

بیان کے مطابق، دونوں ثالثوں نے امریکہ کو تفصیلات سے آگاہ کیا، اور اس بات کی تصدیق کی کہ یہ دستخط ماہ رمضان کے آغاز سے پہلے ہوں گے۔

وائٹ ہاؤس کے قومی سلامتی کے مشیر، جیک سلیوان نے تصدیق کی ہے کہ اسرائیل، مصر، قطر اور امریکہ نے عارضی جنگ بندی کا اعلان کرنے کے لیے قیدیوں کے معاہدے کی "بنیادی خصوصیات" پر سمجھوتہ کر لیا ہے۔

سلیوان نے اتوار کے روز اپنے بیانات میں مزید کہا کہ یہ معاہدہ ابھی تک بات چیت کے تحت ہے اور قطر اور مصر کے درمیان حماس کے ساتھ بالواسطہ بات چیت ہونی چاہیے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ بائیڈن نے ابھی تک رفح آپریشن کے حوالے سے اسرائیل کا منصوبہ نہیں دیکھا ہے، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ واشنگٹن کا خیال ہے کہ شہریوں کے تحفظ کے منصوبے کے بغیر رفح آپریشن کو آگے بڑھانا ضروری نہیں ہے۔


مذاکرات کا دوبارہ آغاز

یہ پیش رفت دوحہ میں مذاکرات کی بحالی کے بعد ہوئی ہے جس کا مقصد غزہ کی پٹی میں جنگ بندی تک پہنچنا ہے۔ جس کے بعد قاہرہ میں امریکی، اسرائیلی اور حماس کے عہدیداروں کی شرکت کے ساتھ مذاکرات کا ایک اور دور ہوگا۔

قاہرہ نیوز چینل نے مصری ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ "غزہ میں جنگ بندی کے مذاکرات کا دوبارہ آغاز، قطری دارالحکومت دوحہ اور قاہرہ میں ہونے والے دیگر ماہرین کی سطح پر ملاقاتوں کے ذریعے ہوا"۔

اس نے ذرائع کے حوالے سے یہ بھی بتایا کہ "دوحہ اور قاہرہ کے مذاکرات حماس تحریک کے ایک وفد کے علاوہ مصر، قطر، امریکہ اور اسرائیل کے ماہرین کی شرکت کے ساتھ ہو رہے ہیں۔"

قاہرہ میں کوئی نتیجہ نہیں نکلا۔

اس ماہ کے اوائل میں قاہرہ میں غزہ میں اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ روکنے کے لیے امریکی، قطری اور اسرائیلی وفود کے درمیان اعلیٰ سطحی مذاکرات ہوئے، جس کا کوئی خاطر خواہ نتیجہ نہیں نکلا۔

ہفتے کے روز، اسرائیلی جنگی کونسل نے غزہ میں جنگ بندی کے معاہدے تک پہنچنے کے مقصد کے ساتھ، جس میں قیدیوں کی رہائی بھی شامل ہے، پیرس میں حالیہ دنوں میں ہونے والی بات چیت کو جاری رکھنے کے لیے جلد ہی ایک وفد قطر بھیجنے کے لیے ہری جھنڈی دکھائی ہے۔

موساد کے سربراہ ڈیوڈ برنیا کی سربراہی میں ایک اسرائیلی وفد جمعہ کو پیرس گیا تاکہ جنگ بندی کے مسودے پر عمل کیا جا سکے جس پر جنوری کے آخر میں فرانسیسی دارالحکومت میں ان کے امریکی اور مصری ہم منصبوں اور قطر کے وزیر اعظم کے ساتھ تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔

رفح شہر میں بے چینی بڑھ رہی ہے، جہاں کم از کم 1.4 ملین افراد پناہ لیے ہوئے ہیں، جن میں سے زیادہ تر لڑائی سے بے گھر ہو گئے ہیں، جب کہ اسرائیلی فوج کی جانب سے ایک بڑے زمینی آپریشن کی تیاری شروع ہونے کا خدشہ ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں