فلسطین اسرائیل تنازع

اسرائیل نے خوارک کے لیے جمع فلسطینیوں کو قتل اور زخمی کرنے سے خود کو بری قرار دے لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی فوج نے بہت تھوڑے وقت میں تحقیقات مکمل کرتے ہوئے اعلان کر دیا ہے کہ دن دیہاڑے خوراک کے حصول کے لیے جمع فلسطینیوں کے ہجوم پر اسرائیلی فوج نے کوئی حملہ نہیں کیا تھا ۔ 112 سے زائد ہلاکتوں کی سب سے بڑی وجہ ہجوم اسرائیلی فوج کی تحقیقات کے مطابق بھگ دڑ ہی بنی ہے۔ اس واقعے میں وزارت صحت غزہ کے مطابق 760 فلسطینی زخمی ہو گئے تھے۔ اسرائیلی فوج کی طرف سے وحشیانہ قتل عام کا الزام دنیا بھر میں تقریباً ہر ملک اور ہر عالمی ادارے دکھ کا اظہار کیا۔اکثر نے اس واقعے کے حوالے سے اسرائیل کی مذمت کی۔

خود اسرائیلی فوج نے شروع میں اس بارے میں یہ تسلیم کیا تھا کہ اسرائیلی فوج کے ذرائع نے میڈیا کے بعض اداروں کے نمائندوں کو بتایا تھا' فوج نے فلسطینیوں کے اس ہجوم کو اپنے لیے خطرے صورت ؐمیں محسوس کیا اور یوں ہجوم پر حملہ کر دیا۔'

تاہم اب اسرائیلی فوج نے پوری دنیا سے ہونے والی مذمت کے بعد اس بارے میں اپنی سوچ اور رائے کو تبدیل کر لیا ہے۔اس امر کا اظہار اتوار کے روز آنے والی تحقیقات کے بعد کیا ہے۔ اسرائیلی فوج کے ترجمان میں کہا ہے رئیر ایڈمرل ڈینئیل ہگاری نے کہا ' اسرائیلی فوج نے غزہ میں حصول خوراک کے لیے جمع فلسطینیوں کی بہت بڑی تعداد میں ہلاکتوں کی تحقیقات کر لی ہیں۔

ترجمان نے کہا ' اس تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق فوج نے خوراک کے لیے جمع اس ہجوم پر کوئی حملہ نہیں کیا تھا۔ بلکہ یہ فلسطینی عوام خوراک حاصل کرتے ہوئے بھگدڑ کے دوران مارے گئے اور زخمی ہوئے۔ ترجمان کے مطابق بڑی تعداد اسی بھگدڑ میں ہلاک ہوئی۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان کی طرف سے فوجی تحقیات میں ان ہلاک کیے گئے فلسطینیوں کو لٹیروں کا نام دیتے ہوئے کہا کہ بھگدڑ کو روکنے کے لیے اسرائیلی فوج نے فائرنگ کی ۔ اس دوران فوج نے پیچھے ہٹنا شروع کیا تو کئی لٹیرے فوجیوں کے قریب آگئے ، اس سے اسرائیلی فوجیوں کو خوف محسوس ہوا اور انہوں نے فوج کے لیے خطرہ پیدا کیا۔ '

ترجمان کے مطابق اسرائیلی فوج کی ابتدائی رپورٹ کے مطابق فوج نے کئی افراد کی طرف جوابی کارروائی کی، تاہم اس رپورٹ میں ان فلسطینیوں کو لٹیرے کا نام کام تو دیا گیا ہے لیکن یہ نہیں بتایا ہے ان کے پاس ایسے کیا ہتھیار تھے کہ اسرائیلی فوج کو ان سے ڈر اور خطرہ محسوس ہوا اور اس نے خوف میں فائرنگ کر دی ۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں