الجزائری قومی ٹیم کے کوچ نے شائقین کے سامنے اپنے کھلاڑیوں کو تھپڑ دے مارے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

الجزائرکی انڈر 20 قومی ٹیم کے کوچ یاسین مانع کی فوٹیج نے اپنے ملک اور تونس کے درمیان کل ہفتے کو ہونے والے میچ کے دوران اپنے متعدد کھلاڑیوں کو تھپڑ مارنے کے بعد بڑے پیمانے پر تنازعہ کو جنم دیا ہے۔

Advertisement

"کھلاڑیوں کو تھپڑ مارنے کا واقعہ"

میچ کے ویڈیو کلپس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ الجزائرمیں تونس کی قومی ٹیم کے کھلاڑیوں اور ان کے ہم منصبوں کے درمیان جھڑپیں ہوئیں جس کے باعث کھیل رک گیا اور الجزائر کے کوچ نے مداخلت کرتے ہوئے اپنے کھلاڑیوں کے ایک گروپ کو تھپڑ مار کر جھگڑا ختم کرایا۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر وائرل ہونے والےان کلپس نے الجزائرکے شائقین کی حیرت میں اضافہ کیا اور کوچ کے رویے پر ایک وسیع بحث کا آغاز کیا۔

سماجی کارکن کارکن مصطفیٰ سطایفی نے ایک بلاگ پوسٹ میں کہا کہ اگر کوچ کی مداخلت سے کھلاڑیوں کو نہ روکتے تو میچ قابو سے باہر ہوتا۔ اس کی تائید بلاگر احمد قاراتی نے کی جنہوں نے کوچ کے رویے کو مناسب قرار دیا۔انہوں نے کہا کہ کھلاڑیوں کو تھپڑ مارنے کا مقصد پرسکون ہونا اور ان کی لاپرواہی سے بچنے کے لیے تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں