واشنگٹن نے امریکی تنصیبات کو نشانہ بنانے سے گریز کا کہا ہے: ایرانی حکام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کے اعلیٰ سفارتکار نے جمعہ کے روز اس امر کا دعویٰ کیا ہے کہ امریکہ نے تہران سے مطالبہ کیا ہے کہ دمشق میں پاسداران انقلاب کو نشانہ بنائے جانے کے بعد ایران امریکی تنصیبات پر حملے نہ کرے۔

سفارت کار نے بتایا کہ ایران نے امریکی قیادت کو تحریری طور پر یہ پیغام بھی بھیجا ہے کہ وہ نیتن یاہو کے دام میں نہ آئے اور جنگ کا حصہ نہ بنے۔ یہ بات ایرانی صدر کے نائب چیف آف سٹاف برائے سیاسی امور محمد جمشیدی نے کہی ہے۔

سوشل میڈیا پلیٹ فارم 'ایکس' پر ایران کی طرف سے امریکہ کی قیادت کو خبردار کیا گیا ہے کہ وہ نیتن یاہو کی طرف سے خود کو جنگ میں کھینچے جانے سے بچے۔ تاہم وائٹ ہاؤس میں قومی سلامتی کونسل کے حکام نے 'العربیہ' سے بات کرتے ہوئے کہا 'یہ بات درست نہیں ہے۔ ایران اس چیز کو محض بڑھا چڑھا کر اور گھما پھرا کر بیان کر رہا ہے۔'

واضح رہے پیر کے روز پاسداران انقلاب کے 7 ارکان جس میں دو سینیئر کمانڈر بھی شامل تھے۔ اسرائیلی فضائی حملے میں دمشق میں ہلاک کر دیے گئے۔ اسرائیل کی طرف سے یہ حملہ دمشق میں ایرانی قونصل خانے پر کیا گیا تھا۔

تاہم امریکی حکام کا کہنا ہے کہ دمشق میں ایرانی قونصل خانے پر حملے کے بعد ایران سے کہا گیا ہے کہ کشیدگی کو بڑھانے کے لیے حملوں سے گریز کرے اور نہ ہی خطے یا امریکی سہولیات اور افرادی قوت کو نشانہ بنائے۔

پینٹاگون نے کہا ہے کہ حملے کے بعد ایران سے رابطہ کیا گیا ہے۔ نیز ایران کو بتایا گیا ہے کہ اس حملے کا ذمہ دار امریکہ نہیں ہے۔ پینٹاگون کی ڈپٹی پریس سیکرٹری سبرینا سنگھ نے کہا 'دمشق پر اسرائیلی حملے کے بارے میں امریکہ کو اطلاع نہیں کی گئی تھی۔ نہ ہی امریکہ کو یہ بتایا گیا تھا کہ حملے کے اہداف کیا ہیں۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں