"بیٹی کی لاش اس کی سالگرہ کا تحفہ ہے":غزہ میں ہلاک جرمن لڑکی کے والد کا انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ سے بیٹی کی لاش برآمد ہونے کے بعد جرمن- اسرائیلی لڑکی شانی لوک کے والدین نے اعلان کیا کہ تدفین آج اتوار کو ہوگی۔

ٹیٹو سے شناخت

شانی لوک کے والد نسیم لوک نے کہا کہ انہوں نےبیٹی کی لاش کی شناخت اس کی تصاویر اور ٹیٹو سے کی ہے۔ بیٹی کی موت اس کی سالگرہ پر ہمارے لیے المناک تحفہ ہے۔

انہوں نےمزید کہا کہ خاندان نے لاش کی شناخت اس کے ہاتھوں پر بنائے گئے ٹیٹو سے کی۔ ان کی بیٹی نے کہا کہ "آئیے اپنی ماں کو سالگرہ کا تحفہ دیں اور واپس چلیں اور ان کے قریب ہوں"۔

انہوں نے واضح کیا کہ گذشتہ جمعہ کو اسرائیلی فوج نے انہیں اور ان کی اہلیہ ریکارڈا لیوک کو مطلع کیا کہ اسرائیلی کمانڈوز کو ان کی بیٹی کی لاش غزہ میں ملی ہے۔

مزید دو لاشیں برآمد

قابل ذکر ہے کہ شانی لیوک جو بہ طور ٹیٹو آرٹسٹ کام کرتی تھی۔ انسٹاگرام پر اپنی تصاویر دکھاتا ہے سات اکتوبر کو اپنے دوستوں کے ایک گروپ کے ساتھ جنوبی اسرائیل کے صحرائے نیگیو میں یہودی تخت کا دن منانے کے لیے ایک کنسرٹ میں شرکت کر رہی تھی۔

تاہم سامعین اس دن کے شروع میں حماس کی طرف سے غزہ کی پٹی کے ارد گرد اسرائیلی بستیوں اور فوجی اڈوں کے خلاف زمینی اور فضائی کارروائیوں سے حیران رہ گئے۔

نوجوان خاتون بعد میں ویڈیو کلپس میں اس طرح نظر آئی جیسے وہ مردہ ہو۔ وہ فلسطینی دھڑوں کے مسلح افراد کے گھیرے میں ایک ٹرک کے اندر پڑی تھی۔غزہ میں منتقل کیے جانے کے بعد اس کے انجام کا پتا نہیں چلا۔

جب تک کہ اسرائیلی حکام نے اکتوبر کے آخر میں اس کی کھوپڑی کا ایک ٹکڑا برآمد ہونے کے بعد اس کی موت کا اعلان کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں