.

خیبر ایجنسی میں خودکش بم دھماکا، 6 افراد جاں بحق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے وفاق کے زیر انتظام شمال مغربی قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں ایک خودکش بم دھماکے میں چھے افراد جاں بحق اور پچاس سے زیادہ زخمی ہوگئے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق خودکش بم دھماکا افغانستان کی سرحد کے نزدیک واقع خیبرایجنسی کی تحصیل جمرود میں ایک سرکاری دفتر کے باہر ہوا ہے۔خیبر ایجنسی کے پولیٹیکل ایجنٹ شہاب علی شاہ نے صحافیوں کو بتایا ہے کہ حملہ آور بمبار نے ان کے دفتر کے باہر خود کو دھماکے سے اڑایا ہے۔انھوں نے کہا کہ سخت سکیورٹی انتظامات کی وجہ سے حملہ آور ان کے دفتر میں گھسنے میں کامیاب نہیں ہوسکا ہے ورنہ زیادہ جانی نقصان کا خدشہ تھا۔

انھوں نے بتایا ہے کہ بم دھماکے میں خاصہ دار فورس کا ایک اہلکار بھی مرنے والوں میں شامل ہے اور پندرہ اہلکاروں سمیت چھپن افراد زخمی ہوئے ہیں۔زخمیوں کو صوبہ خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں منتقل کردیا گیا ہے جہاں چھے زخمیوں کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔

کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی ) نے جمرود میں اس خودکش بم حملے کی ذمے داری قبول کر لی ہے۔ٹی ٹی پی کے ترجمان محمد خراسانی نے صحافیوں کو بھیجی گئی ایک ای میل میں کہا ہے کہ ان کے خودکش بمبار نے دھماکا کیا ہے۔