.

اسلام آباد میں مارگلہ کی پہاڑیوں پر پانچ سال بعد برف باری

شمالی علاقوں میں برف باری اور شدید بارشوں سے سردی کی شدت میں اضافہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد ،صوبہ پنجاب کے شمالی اور صوبہ خیبر پختونخوا سمیت ملک کے بالائی پہاڑی علاقوں میں بدھ اور جمعرات کی شب شدید بارش اور پہاڑوں پر برف باری سے سردی کی شدت میں مزید اضافہ ہو گیا ہے۔

پاکستان کے محکمہ موسمیات کی جمعرات کی شب چار بجے کی اطلاع کے مطابق گذشتہ چوبیس گھنٹے کے دوران صوبہ خیبر پختونخوا کے بالائی علاقوں ،شمالی پنجاب ،اسلام آباد ،گلگت ،بلتستان اور آزاد کشمیر میں شدید بارش ہوئی ہے اور طوفان بادوباراں کے ساتھ برف باری ہوئی ہے۔

اسلام آباد میں مارگلہ کی پہاڑیوں پر پانچ سال کے بعد برف باری ہوئی ہے۔گذشتہ چوبیس گھنٹے کے دوران شمال مغربی ضلع دیر میں سب سے زیادہ بارش ریکارڈ کی گئی ہے اور وہاں 98 ملی میٹر بارش ہوچکی تھی۔اسلام آباد کے علاقے سیدپور میں 65 ملی میٹر ،زیروپوائنٹ میں 64،گولڑہ میں 48 اور بوکڑا میں 46 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی ہے۔

ملک کے شمال میں واقع سیاحتی مقام مالم جبہ اور بابوسر میں سب سے زیادہ برف باری ہوئی ہے اوروہاں تین ،تین فٹ برف پڑی ہے۔گلیات ،کاغان اور ناران میں دو فٹ اور مری میں ایک فٹ تک برف پڑ چکی ہے۔

شمال مغربی شہر ایبٹ آباد میں چار سے پانچ انچ تک برف باری ہوئی ہے اور شہر میں برف باری کا پچیس سال پرانا ریکارڈ ٹوٹ گیا ہےجب کہ مانسہرہ کے پہاڑوں پر بھی برف باری کا دس سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا ہے۔مانسہرہ میں برف باری کی وجہ سے ناران، کاغان، تورغر کے پہاڑی علاقوں کی رابطہ سڑکیں بند ہو گئی ہیں۔مانسہرہ کی تحصیل بالاکوٹ میں برف باری کے باعث مواصلاتی نظام درہم برہم ہو کررہ گیا ہے۔

شمالی علاقوں میں شدید برف باری سے پھسلن کے باعث شاہراہ قراقرم پر کئی گاڑیاں آپس میں ٹکرا گئیں اور ٹریفک کا نظام بری طرح متاثر ہوا ہے۔پاکستان کے زیر انتظام آزاد کشمیر کی وادی نیلم میں تین فٹ تک برف پڑ چکی ہے جب کہ نیلم، لیپا، باغ کی شاہراہیں بند ہوگئی ہیں اور پہاڑی اور مٹی کے تودے گرنے کی اطلاعات بھی موصول ہوئی ہیں۔

وادیِ سوات کے شہر مینگورہ میں چھے برس کے بعد برف باری ہوئی ہے جس سے سیاح اور شہری لطف اندوز ہورہے ہیں۔شمال مغربی شہر دیر میں شدید بارش کے نتیجے میں ایک مکان کی چھت گرنے سے دو بہنیں جاں بحق ہو گئی ہیں۔محکمہ موسمیات کے مطابق آیندہ چوبیس گھنٹے کے دوران پہاڑؓوں پر مزید برف باری اور میدانی علاقوں میں بارش کا امکان ہے۔