.

تنخواہ میں اضافہ چاہئے تو نماز پڑھیں: چیف جسٹس آزاد کشمیر

عدالتی عمال کی ترقی 'نماز کی ادائی' سے مشروط ہو گی: چوہدری محمد ابراہیم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان کے زیر انتظام علاقے آزاد جموں و کشمیر کی سپریم کورٹ کے چیف جسٹس چوہدری محمد ابراہیم ضیاء نے عدالتی ملازمین کی ترقی نماز کی پابندی کے ساتھ ادائیگی سے مشروط کر دی۔

سپریم کورٹ کے 12 ویں کی حیثیت سے حلف اٹھانے کے بعد عدالتی عملے سے اپنے پہلے خطاب میں چیف جسٹس نے کہا کہ ملازمین کی سالانہ ترقی نماز کی باقا عدہ ادائیگی سے مشروط ہو گی۔ اس مقصد کے لئے دو گروپ بنائیں ایک گروپ کی امامت خود کراؤں گا جبکہ دوسرے گروپ کی امامت امام مسجد کرائیں گے ۔

یاد رہے کہ جسٹس چوہدری محمد ابراہیم ضیا نے چیف جسٹس سپریم کورٹ آزاد کشمیر کا گذشتہ روز حلف اٹھایا۔ صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خان نے اُن سے ایوان صدر مظفرآباد میں منعقدہ تقریب میں حلف لیا۔

بعدازاں چیف جسٹس چوہدری محمد ابراہیم ضیا نے سپریم کورٹ کے افسروں، اہلکاروں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سرکاری ملازمین اپنے فرائض پوری محنت، دیانت، خلوص نیت، لگن اور ذاتی پسند نا پسند سے بالاتر ہو کر انجام دیں۔ علاقائی، لسانی اور گروہی تعصبات سے بالاتر ہو کر ملت اسلامیہ کے فرد کی حیثیت سے اپنے فرائض کی بجا آوری یقینی بنائیں، کسی قسم کی غفلت، لاپرواہی، بددیانتی اور سرکاری املاک کا نقصان برداشت نہیں کیا جائے گا۔

قبل ازیں چیف جسٹس جب سپریم کورٹ پہنچے تو ان کا پرتپاک استقبال کیا گیا۔ پولیس کے چاق چوبند دستے نے گارڈ آف آنر پیش کیا، چیف جسٹس نے پریڈ کا معائنہ بھی کیا۔