سعودی عرب کا پاکستان کو 2 ارب ڈالرقرض دینے کا اعلان،آئی ایم ایف سے جلدمعاہدے کاامکان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ بیل آؤٹ پیکج کوحتمی شکل دینے کے قریب پہنچ گیا ہے کیونکہ سعودی عرب نے پاکستان کو دیوالیہ ہونے سے بچانے میں مدد دینے کے لیے عالمی قرض دہندہ کو 2 ارب ڈالرقرض دینے کی یقین دہانی کرائی ہے۔

پاکستان کی وزیرمملکت برائے خزانہ ڈاکٹرعائشہ غوث پاشا نے اسلام آباد میں صحافیوں کو بتایا کہ آئی ایم ایف نے عندیہ دیا ہے کہ اسے سعودی عرب کی جانب سے یقین دہانی کرادی گئی ہے۔

انھوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدہ اب بھی متحدہ عرب امارات کی جانب سے اسی طرح کے ایک ارب ڈالر قرض کے وعدے پرمنحصر ہے جبکہ دوسری جانب آئی ایم ایف نے فوری طور پراس معاملے پر تبصرہ نہیں کیا ہے۔

گذشتہ ماہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا تھا کہ دوست ممالک کی جانب سے مالی وعدوں کا انتظار ہے اور یہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدہ طے پانے میں آخری رکاوٹ ہیں۔

گذشتہ ہفتے وزیراعظم شہباز شریف نے یہ بھی پارلیمان سے خطاب میں کہا تھا کہ آئی ایم ایف بیل آؤٹ فنڈز جاری کرنے سے پہلے دوست ممالک سے بیرونی فنانسنگ کے وعدوں کی تکمیل چاہتا ہے۔

بین الاقوامی قرض دہندہ فروری کے اوائل سے پاکستان کے ساتھ نومبرسے ہونے والی 1.1 ارب ڈالر کی فنڈنگ کی بحالی کے لیے بات چیت کر رہا ہے۔یہ رقم 2019 میں طے پانے والے 7 ارب ڈالر کے بیل آؤٹ پیکیج کا حصہ ہے۔

پاکستان کے مرکزی بینک میں زرمبادلہ کے ذخائرنازک سطح پرگر چکے ہیں اور یہ چارہفتوں کی درآمدات کے لیے کافی نہیں ہیں۔اس تناظر میں آئی ایم ایف کی قسط ملک کے لیے اہم ہے کیونکہ اس سے بیرونی فنانسنگ کے دیگر راستے بھی کھل جائیں گے،جس سے پاکستان کو اپنی مالی مشکلات پرقابوپانے میں مدد ملے گی۔

موڈیزانویسٹرز سروس کے مطابق پاکستان اس وقت اپنی تاریخ کے سب سے بڑے معاشی بحران سے گزر رہا ہے اوراس کے دیوالیہ ہونے کے خطرات بڑھ رہے ہیں۔موڈیزنے گذشتہ ماہ ملک کی درجہ بندی کوگھٹادیا تھا اوراس کو کم ترین کردیا تھا۔

اشیائے صرف کی قیمتوں میں ہوشربااضافے کے بعد بینک دولت پاکستان نے رواں ہفتے شرح سود کو تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچا دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں