سعودی فنڈ برائے ترقی کے تعاون سے آزاد کشمیر میں دو پن بجلی منصوبوں کا قیام

طے پانے والے دونوں منصوبوں سے پن بجلی کی پیداوار میں قومی گرڈ میں 70 میگاواٹ کا اضافہ ہو گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی فنڈ برائے ترقی (ایس ایف ڈی) نے آزاد جموں و کشمیر (اے جے کے) میں دو پن بجلی منصوبوں کی مالی اعانت کے معاہدات پر دستخط کیے ہیں۔

پاکستان کے سرکاری میڈیا نے اتوار کے روز بتایا کہ سی ای او سلطان بن عبدالرحمٰن المرشد کی قیادت میں ایس ایف ڈی کے ایک وفد نے آزاد کشمیر کا دورہ کیا اور شونٹر اور جاگران-4 پن بجلی منصوبوں کی مالی اعانت کے معاہدوں پر دستخط کیے۔

دونوں منصوبے پن بجلی کی پیداوار میں قومی گرڈ میں 70 میگاواٹ کا اضافہ کریں گے۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق شونٹر پن بجلی منصوبہ 66 ملین ڈالر کی لاگت سے 48 میگاواٹ بجلی پیدا کرے گا جبکہ جاگران-4 پن بجلی منصوبہ 41 ملین ڈالر کی لاگت سے مکمل ہو گا اور 22 میگاواٹ بجلی پیدا کرے گا۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان کی اسپیشل انویسٹمنٹ فیسیلیٹیشن کونسل (ایس آئی ایف سی) جو جون میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے لیے قائم کی گئی تھی، نے ان معاہدوں پر عمل درآمد میں کلیدی کردار ادا کیا۔

سعودی حکومت کا ادارہ ایس ایف ڈی ترقی پذیر ممالک کو قرضہ جات اور گرانٹس کے ذریعے ترقیاتی اعانت اور مالی امداد فراہم کرتا ہے۔ ماضی میں یہ فنڈ زرِ مبادلہ کے ذخائر کو تقویت دینے کے لیے پاکستان کے سٹیٹ بینک میں رقم جمع کروا چکا ہے اور اس نے انفراسٹرکچر، تعلیم اور صحت کی نگہداشت کے مختلف ترقیاتی منصوبوں کے لیے فنڈز فراہم کیے ہیں۔

ایک اعلیٰ پاکستانی اہلکار نے گذشتہ ہفتے کہا کہ پاکستانی حکام نے حال ہی میں توانائی، صحت، تعلیم اور بنیادی ڈھانچے کے شعبوں میں متعدد منصوبوں میں تعاون کے لیے بات چیت کی تھی۔

پاکستان کے اقتصادی امور ڈویژن کے سیکرٹری ڈاکٹر کاظم نیاز نے عرب نیوز کو بتایا، "ہمارے پاس پہلے سے ہی ایک فریم ورک معاہدہ تھا۔ ہم نے مستقبل میں تعاون کے لیے متعدد منصوبوں کی ایک پائپ لائن پر تبادلۂ خیال کیا ہے جس میں انہوں نے گہری دلچسپی ظاہر کی ہے۔"

"یہ منصوبے توانائی، صحت، تعلیم اور انفراسٹرکچر کے شعبوں میں ہیں۔"

نیاز نے منصوبوں کے بارے میں مزید تفصیلات فراہم نہیں کیں جن کا ان کے مطابق اس وقت اشتراک کیا جائے گا جب سرمایہ کاری اور تعاون کے لیے اسلام آباد کی جانب سے مشترکہ اقدامات کی فہرست پر سعودی فیڈبیک موصول ہو گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں