ریاض اور انقرہ نے دفاعی تعاون کے ایک ایگزیکٹو پلان پر دستخط کر دیئے

ڈرون کے حصول کے لیے بایکارکمپنی کے ساتھ دو معاہدوں پر دستخط ہوئے: خالد بن سلمان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے وزیر دفاع شہزادہ خالد بن سلمان نے کل منگل کو ترکیہ کے وزیر دفاع یاشار گلر کے ساتھ دفاعی تعاون کے ایک ایگزیکٹو پلان پر دستخط کرنے کا اعلان کیا ہے۔

سعودی وزیر دفاع نے ’ٹوئٹر‘ پر اپنے ایک پیغام میں کہا کہ یہ قدم دونوں دوست ممالک کے درمیان دفاعی اور عسکری شعبے میں تعاون کی نئی انتہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "وزارت دفاع اور ترکیہ کی بایکار ڈیفنس انڈسٹریز کمپنی کے درمیان دومعاہدوں پر دستخط کیے گئے، جن کے مطابق وزارت دفاع ڈرونز حاصل کرے گی۔ اس کا مقصد مسلح افواج کی استعداد کو بڑھانا اور مملکت کے دفاع کی مینوفیکچرنگ صلاحیتوں کو مضبوط بنانا ہے۔

یہ دستخط ترک صدر رجب طیب ایردوان کے دورہ سعودی عرب کے موقع پر کیے گئے، جہاں سوموار کو جدہ کے پیس پیلس میں سعودی عرب کے ولی عہد اور وزیر اعظم شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز نے ان کا استقبال کیا تھا۔

دوسری طرف بایکار نے ایک بیان میں کہا کہ سعودی وزارت دفاع کے ساتھ معاہدے میں ٹیکنالوجی کی منتقلی اور مشترکہ پیداوار میں تعاون شامل ہے۔

سعودی ولی عہد اور ترک صدر نے باضابطہ بات چیت اور دوطرفہ ملاقات کی جس میں دونوں ممالک کے درمیان دوطرفہ تعلقات کے پہلوؤں، مشترکہ تعاون کے امکانات اور مختلف شعبوں میں انہیں ترقی دینے کے مواقع کا جائزہ لیا گیا۔

ترک صدر دونوں ممالک کے درمیان مشترکہ تعلقات اور اقتصادی، سرمایہ کاری اور تجارتی تعاون کو مضبوط بنانے کی کوششوں کے تحت پیر کو سرکاری دورے پر جدہ پہنچے تھے۔

ایردوآن نے استنبول سے روانہ ہونے سے قبل پیر کو سعودی عرب کے دورے کے آغاز میں کہا تھا کہ ان کے اس دورے میں قطر اور متحدہ عرب امارات بھی شامل ہیں۔ ترکیہ اور خلیجی ریاستوں کے درمیان تجارتی تبادلے کا حجم گذشتہ 20 سالوں میں 1.6 بلین ڈالر سے بڑھ کر 22 ارب ڈالر تک پہنچ گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں