.

مسلح تنازعات میں بچوں کو بھرتی کرنے والے عناصر: رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزارت خارجہ کی جانب سے جاری ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ شامی حکومت اور دہشت گرد تنطیم "PKK" (کردستان ورکرز پارٹی) بھی لڑائی کی کارروائیوں کے واسطے بچوں کی جبری بھرتی کرتی ہیں۔

یہ انکشاف سال 2016ء کے لیے انسانی تجارت کے بارے میں امریکی وزارت خارجہ کی رپورٹ میں سامنے آیا ہے ، رپورٹ منگل کے روز وزارت کی ویب سائٹ پر جاری کی گئی۔

رپورٹ کے مطابق عراق میں بچوں کو داعش سمیت مختلف مسلح گروپوں کی جانب سے جبری بھرتی اور استحصال کا سامنا ہے۔ اس کے نتیجے میں ان بچوں کو سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں اذیت اور گرفتاری کا نشانہ بننا پڑتا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ عراق میں جو مسلح جماعتیں بچوں کی جبری بھرتی کر رہی ہیں ان میں پی کے کے، داعش، پاپولر موبیلائزیشن فورسز، قبائلی فورسز اور ایران نواز ملیشیائیں شامل ہیں۔

رپورٹ میں شام کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ بشار الاسد کی حکومت کی جانب سے جنگجو بچوں کی جبری بھرتی اور ان کے استحصال کا سلسلہ جاری ہے.. اور شامی سرکاری حکام کی طرف سے حکومت، اس کی حمایت یافتہ ملیشیاؤں، مسلح اپوزیشن فورسز اور داعش جیسی دہشت گرد تنظیموں کے ہاتھوں بچوں کی بھرتی اور ان کے استحصال کو روکنے کی کوشش بھی نہیں کی گئی۔