حماس نے ’’ ٹائیگر‘‘ بکتر بند گاڑی تباہ کرکے اسرائیل کو حیران کردیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی فوج نے اعلان کیا ہے کہ غزہ کی پٹی کے اندر زمینی کارروائی کے دوران اس کے 15 فوجی مارے گئے۔

ان میں سے کچھ اس وقت مارے گئے جب ان کی "ٹائیگر" بکتر بند گاڑی کو کورنیٹ میزائل سے نشانہ بنایا گیا۔ اس کا رخ غزہ شہر کی شجاعیہ کالونی کے مشرق میں تھا۔

اسرائیلی ویب سائٹ "والا" نے بتایا کہ ایک بکتر بند گاڑی کو جس طرح تباہ کردیا گیا اس سے اسرائیل کو حیرانی کا جھٹکا لگا ہے۔ اسرائیل اس گاڑی کی تیاری پر لاکھوں شیکل خرچ کرتا ہے۔

امریکی "آرمی ریکگنیشن" ویب سائٹ کے مطابق اسرائیلی فوج کے ٹیکنالوجی اور لاجسٹکس ڈپارٹمنٹ نے برسوں پہلے اس بکتر بند گاڑی کو تیار کیا تھا۔ اور اسے "ٹائیگر" کا نام دیا تھا تاکہ مختلف شعبوں میں معمول کے حفاظتی مشن انجام دیے جا سکیں۔

تاہم یہ ٹروپ کیریئر اصل میں اوشکوش نے ڈیزائن کیا تھا۔ یہ کمپنی خصوصی ٹرکوں، فوجی گاڑیوں، ٹرکوں کی باڈیز، کرینوں کی ڈیزائننگ اور مینوفیکچرنگ میں مہارت رکھتی ہے۔ اسرائیلی فوج نے ان میں سے سینکڑوں گاڑیاں سال پہلے لاجسٹک ٹرانسپورٹ میں استعمال کے لیے خریدی تھیں۔

2017 میں اسرائیلی وزارت دفاع نے اپنی سرکاری ویب سائٹ پر 200 ’’ ٹائیگر‘‘ بکتر بند گاڑیاں خریدنے کا اعلان کیا تھا۔ یہ گاڑیاں 2018 میں فراہم کی جانی تھیں۔

اس بکتر بند گاڑی کا کل وزن کم از کم 10 ٹن ہے۔ اسے ایک کشادہ جنگی کیبن سمجھا جاتا ہے جہاں 12 سے 14 سپاہی بولڈ سیٹوں پر آرام سے بیٹھ سکتے ہیں۔

گاڑی کے اندر سامنے والے کیبن میں ایک جدید ایئر کنڈیشنگ اور حرارتی نظام ہے۔ چوڑی کھڑکیاں ہیں جس میں براہ راست باہر دیکھنے کی سہولت ہے۔ گاڑی کے کونے میں سوراخ ہیں۔ خطرات کو دور کرنے کے لیے پتھر کے تحفظ کی سلاخیں بھی لگائی گئی ہیں۔

اسرائیلی ٹینک غزہ میں کارروائی میں شریک
اسرائیلی ٹینک غزہ میں کارروائی میں شریک

گاڑی کو باہر اور اندر سے حرارتی موصلیت کے لیے خصوصی مواد سے پینٹ کیا جاتا ہے تاکہ درجہ حرارت کو برقرار رکھا جا سکے اور شعلوں کو روکا جا سکے۔ جب گاڑی پر مولوٹوف کاک ٹیل پھینکا جاتا ہے تو یہ شعلوں سے بالکل متاثر نہیں ہوتی۔ حفاظتی پلیٹوں کو مشین گن جیسے چھوٹے ہتھیاروں کے راؤنڈز کو جذب کرنے کے لیے بھی ڈیزائن کیا گیا ہے۔

امریکی "آرمی ریکگنیشن" ویب سائٹ کے مطابق حفاظتی وجوہات کی بنا پر بکتر بند گاڑی کی رفتار تقریباً 55 سے 60 کلومیٹر گھنٹہ رکھی ہے۔

جب سے اسرائیل نے گزشتہ ہفتے شمالی غزہ کی پٹی میں زمینی کارروائیوں میں توسیع کی ہے اسرائیلیوں میں حکومت اور وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو پر تنقید بڑھ گئی ہے۔ بہت سے سیاسی اور سکیورٹی ناقدین اور حماس کے پاس یرغمالی خاندانوں کے اہل خانہ نے کہا تھا کہ یہ زمینی دراندازی خطرات سے بھری ہوئی ہے اور اس کی قیمت اسرائیل کو بہت زیادہ ادا کرنا ہوگی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں