.

لندن: تین اماراتی خواتین پرلگژری ہوٹل میں ہتھوڑے سے حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لندن کے ایک لگژری ہوٹل میں ایک شخص نے متحدہ عرب امارات سے تعلق رکھنے والی تین خواتین پر ہتھوڑے سے حملہ کیا ہے جس کے نتیجے میں وہ زخمی ہو کر ایک اسپتال میں زیرعلاج ہیں۔

لندن پولیس کے مطابق ان تینوں اماراتی خواتین کی عمریں تیس اور چالیس کے درمیان ہیں۔ان پر چار ستارہ کمبرلینڈ ہوٹل کے ایک کمرے میں اتوار کو علی الصباح حملہ کیا گیا تھا۔ ہتھوڑے کے وار سے ان کے سر اور چہرے بری طرح زخمی ہیں۔

ان کے ساتھ والے کمرے میں تین بچے بھی سوئے ہوئے تھے لیکن وہ اس ''غیر معمولی تشدد'' کے حملے میں محفوظ رہے ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ تینوں زخمی خواتین وسطی لندن کے ایک اسپتال میں زیرعلاج ہیں۔ان میں سے ایک کی حالت تشویش ناک ہے لیکن دو کو آنے والے زخم جان لیوا نہیں ہیں۔

لندن کی میٹرو پولیٹن پولیس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ہائیڈپارک کے نزدیک واقع ہوٹل میں حملے کے بعد اتوار کی رات ایک بج کر پچاس منٹ پر افسروں کو فون کیا گیا تھا۔ تفتیش کار اس حملے کو قتل عمد کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔

بیان کے مطابق:''اس مرحلے پر یہ خیال کیا جاتا ہے کہ ایک مشتبہ مرد ہوٹل کی ساتویں منزل میں ایک ہیڈ روم میں داخل ہوا تھا جہاں یہ خواتین اور ان کے ساتھ والے کمرے میں بچے سورہے تھے''۔

تفتیش کاروں کا خیال ہے کہ کمرے میں سوئی ہوئی خواتین میں سے کسی کے جاگ جانے سے مشتبہ حملہ آور ڈسٹرب ہوگیا اور اس نے ہتھوڑے سے ان خواتین پر حملہ کردیا۔جائے وقوعہ سے ہتھوڑے کو برآمد کر لیا گیا ہے۔

ایک ہزار کمروں پر مشتمل یہ ہوٹل گیومین گروپ کا ملکیتی ہے،ہوٹل کے کسی ترجمان نے فوری طور پر اس واقعے کے بارے میں کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔ڈٹیکٹیو چیف انسپکٹر اینڈی شالمرس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''یہ تین خواتین پر ایک غیر معمولی متشدد حملہ ہے۔میں اتوار کو رات ایک سے دوبجے تک ہوٹل یا اس کے آس پاس موجود کسی بھی شخص سے گفتگو کے لیے تیار ہوں''۔