.

شام میں لڑائی کے دوران سعودی نوجوان جاں بحق

بدر الغنزی کی موت کی اطلاع ایک نامعلوم شخص نے دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

نامعلوم فون کالر نے ایک سعودی خاندان کے سربراہ کو آگاہ کیا ہے کہ ان کا لخت جگر شام میں جاری خانہ جنگی میں اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا ہے۔ شامی لڑائی میں مبینہ طور پر شریک بدر الموط الغنزی کے اہل خانہ نے بتایا کہ ایک نامعلوم شخص نے فون پر انہیں آگاہ کیا کہ بدر الغنزی شامی جنگ میں کام آ گیا ہے۔

اطلاع دینے والے شخص نے مقتول سعودی نوجوان کے اہل خانہ سے اس انداز میں بات کی جیسے وہ انہیں ان کے بیٹے کی 'شہادت' کی خوشخبری دے رہا ہے۔ کال کرنے والے شخص نے اپنا نام ظاہر کئے بغیر فون سننے والے فرد کو یقین دلایا کہ وہ جلد ہی مقتول کی تصاویر انہیں ارسال کرے گا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کو ملنے والی تفصیلات کے مطابق بدرالموط الغنزی 10 ماہ قبل اپنے والدین کو یہ کہہ کر گھرسے کویت جانے کا کہہ کر گیا لیکن ایک ماہ بعد اس نے شام سے ٹیلیفون کرکے اپنی والدہ کو بتایا کہ وہ شام پہنچ گیا ہے اور 'جہاد' میں حصہ لینے کی اجازت چاہتا ہے۔

مقتول سعودی نوجوان کے چچا زاد مخلد نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ بدر الغنزی ہم سے رابطے میں تھا تاہم اس نے ہمیں اپنا مستقل رابطہ نمبر نہیں دیا۔ وہ خود ہی کسی نہ کسی فون نمبر سے بات کر لیتا۔ جب ہم اس سے گھر واپس آنے کی بات کرتے تو وہ فون کال منقطع کردیتا اور پھرایک ماہ تک غائب رہتا۔

بدر کی موت کی خبر سُن کر اس کی ماں غم سے نڈھال ہے اور اسے غشی کے دورے پڑ رہے ہیں، جس کے باعث اسے اسپتال داخل کرا دیا گیا ہے۔