.

مراکشی فرمانروا کی ذاتی تصاویر دکھانے پر سرکاری ٹی وی کی سرزنش

شاہ محمد ششم دورہ تیونس کے دوران عام شہریوں سے گھل مل گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مراکش کے سرکاری ٹیلی ویژن چینل کو ملک کے فرمانروا شاہ محمد ششم کی دورہ تیونس کے دوران عام شہریوں کے ساتھ لی گئی تصاویر نشر کرنے پر قوم سے معافی مانگنا پڑی ہے۔ مراکش کے میڈیا اور شاہی تاریخ میں اس نوعیت کا پہلا واقعہ ہے جب سرکاری ٹی وی نے اپنے ہی اقدام پر شاہی دفتر اور پوری قوم سے معافی مانگی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق شاہ محمد ششم حال ہی میں اپنے دورہ تیونس سے وطن واپس لوٹے ہیں۔ ان کے وطن پہنچتے ہی شاہی دفتر سے سرکاری ٹی وی کو ایک تنبیہی مراسلہ بھیجا گیا جس میں شاہ محمد ششم کی نجی زندگی میں مداخلت کے الزام میں ٹی وی کی انتظامیہ سے معافی کا مطالبہ کیا گیا۔ مراسلے میں کہا گیا ہے کہ سرکاری ٹی وی نے سوشل میڈیا سے شاہ محمد ششم کی ذاتی نوعیت کی تصاویر اٹھا کر نشر کر کے'توہین آمیز' غلطی کی ہے۔ اپنی اس غلطی پر ٹی وی انتظامیہ فورا معافی مانگے۔

مراکش کے مقبول ٹی وی چینل "دوزیم" نے شاہی دفتر سے ملنے والے مراسلے کے بعد شاہ محمد ششم کی تصاویر نشرکرنے پر پوری قوم اور حکومت سے معافی مانگی ہے۔

خیال رہے کہ شاہ محمد ششم کا حالیہ دورہ اپنی مقررہ مدت سے کچھ زیادہ ہی طویل ہو گیا۔ دورے کے دوران جہاں انہوں نے تیونسی حکومت کی سرکردہ شخصیات سے ملاقاتیں کیں وہیں وہ اپنے اہل خانہ، بھائی اور بیٹے کے ہمراہ عام شہریوں سے بھی گھل مل گئے۔ سڑکوں اور بازاروں میں چلتے ہوئے شاہ محمد ششم اور عام تیونسی شہریوں میں بھی ملاقاتیں ہوئیں اور لوگ ان کے ساتھ اپنے فوٹو بھی بنواتے رہے، جو بعد ازاں سوشل میڈیا پر بھی مقبول ہوئے۔\

ٹی وی کے نیوز اینکر نے شاہ محمد ششم کی تصاویر نشر کرنے پر معافی مانگنے کے ساتھ کہا کہ چونکہ انہیں یہ تصاویر سوشل میڈیا سے ملی تھیں جس پر وہ انہیں عام نوعیت کی تصاویر سمجھ بیٹھے تھے۔ ان سے سہوا ایسا ہو گیا ہے جس پروہ قوم اور شاہ محمد ششم دونوں سے معافی کے خواستگار ہیں۔