.

"بیرون ملک جنگ پر اکسانے والے خائن اور دھوکے باز ہیں"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جھوٹ کے مرتکب ہیں۔ وہ دوسروں‌ کی بچوں کی جانوں کو خطرے میں ڈالتے ہیں۔ ایسا کرنا میرے نزدیک نہ صرف دھوکہ اور نو سر بازی ہے بلکہ یہ قوم اور دین کے ساتھ پرلے درجےکی خیانت ہے۔

نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے کہ"جس نےدھوکہ دیا وہ ہم میں سےنہیں ہے"۔ تو جو لوگ سعودی باشندوں کو بیرون ملک جنگوں میں میں شمولیت پر اکساتے ہیں وہ قوم کو دھوکا دیتے ہیں۔ یہ لوگ اپنے ہی شہریوں کو حکومت وقت کے بغاوت پر اکساتے ہیں۔ ایسے لوگ دین، ایمان اور اللہ کے بھی دشمن ہیں۔ ان سے بچ کر رہنے کی اشد ضرورت ہے"۔

مفتی اعظم کا کہنا تھا کہ نام نہاد مذہبی مبلغین اور جہادیوں کی کوششوں سے کتنے ہی نوجوان بیرون ملک جنگی محاذوں پر گئے اور وہاں بے گناہ مارے گئے۔ ان کے اہل خانہ کے غم ہم سب کے غم ہیں۔ ہر آنکھ ان پر اشکبار ہے کیونکہ انہیں دھوکے کے ذریعے ورغلا کر بیرون ملک لے جایا گیا تھا۔ لہٰذا ہم اپنی قوم کے بیٹوں کو بیرون ملک کسی بھی غیر شرعی محاذ جنگ پر نہیں دیکھنا چاہتے ہیں جو لوگ نوجوانوں کو بیرون ملک جنگوں میں گھسیٹنے کے مکروہ دہندے میں ملوث ہیں وہ جلد اپنے کیے کی سزا پائیں گے۔

خیال رہے کہ شام میں صدر بشار الاسد کےخلاف جاری بغاوت کی تحریک شروع ہونے کے بعد سعودی عرب کے جوانوں کو بھی اس جنگ میں گھیسٹنے کی کوششیں کی جاتی رہی ہیں۔ شام کی جنگ کو جہاد قرار دینے والے مذہبی مبلغ نوجوانوں کو اس جنگ میں شرکت پر اکسانے میں پیش پیش ہیں تاہم سعودی عرب کی حکومت اس رحجان کی مسلسل حوصلہ شکنی کر رہی ہے۔