سعودی سفارت خانے پرحملے کے ملزمان کو چھڑانے کی سازش بے نقاب

خامنہ ای کے مقرب عناصر ملزمان کی بس کا جیل تک تعاقب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایران میں اصلاح پسند ذرائع ابلاغ نے انکشاف کیا ہے کہ گذشتہ برس کے اوائل میں تہران میں سعودی عرب کے سفارت خانے پر حملہ کرنے میں ملوث عناصر کو عدالت میں پیشی سے بچانے کی کوشش کی گئی تھی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سپریم لیڈر کےمقرب ایرانی حزب اللہ گروپ کے عناصر نے سعودی سفارت خانے پر حملے میں ملوث عناصر معظمی اور احسان بابائی کی بس کا اس وقت تعاقب کیا، جب انہیں عدالت میں پیشی کے لیے لے جایا جا رہا تھا۔

اصلاح پسندوں کی مقرب نیوز ویب سائیٹ ’آمد نیوز‘ کی رپورٹ کے مطابق کچھ عرصہ قبل سعودی سفارت خانےکو آگ لگانے میں ملوث دو ملزمان کوایک بس کے ذریعے عدالت میں پیشی کے لیے لے جایا جا رہا تھا۔ اس دوران ایرانی حزب اللہ کے عناصر کے 30 موٹرسائیکل سواروں نے بس کا تعاقب کیا اور ملزمان کو چھڑانے اور انہیں عدالت میں پیشی کے بعد ’ایفین’ جیل لے جانے سے روکنے کی کوشش کی۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ واقعہ 13 فروری کو اس وقت پیش آیا جب ملزمان کو عدالت میں پیشی کے بعد سخت سیکیورٹی میں جیل لے جایا جا رہا تھا۔ اس دوران حزب اللہ نامی گروپ کے عناصر نے ملزمان کو چھڑانے کے لیے بس کا تعاقب کیا۔ تعاقب کرنے والوں کا گمان تھا کہ ایفین جیل لے جائے جانےوالے ملزمان میں سعودی عرب کے سفارت خانے پرحملے کا ماسٹر مائینڈ حسن کرد میھن بھی شامل ہے تاہم وہ اس بس میں موجود نہیں تھا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ جب بس کا گھیراؤ کرلیا گیا تو اس کی سیکیورٹی پر مامور پولیس اہلکار بس کو ’تشمران‘ جیل کی طرف لے جانے پر مجبور ہوگئے تھے۔

آمد نیوز کے مطابق بس کا تعاقب کرنے والے موٹرسائیکل سوار ’ایفین‘ جیل تک بس کے ساتھ رہے۔ جیل کے باہر انہوں نے احتجاجی مظاہرہ بھی کیا اور ملزمان کی رہائی کے لیے شدید نعرے بازی کی۔

ویب سائیٹ کی رپورٹ کے مطابق سعودی عرب کے سفارت خانے پر حملے میں ملوث ملزمان میں سے پانچ ملزم اس وقت ’ایفین‘ جیل میں قید ہیں۔

ایران کی ریاستی آفیشل عدالت نے 26 دسمبر کو پانچ ملزمان کو سعودی سفارت خانے پر حملے، توڑپھوڑ، آتش زدگی اور دیگر الزامات کے تحت سنائی گئی چھ ماہ قید کی سزا پر عمل درآمد روک دیا تھا۔

ملزمان کے وکیل مصطفیٰ شعبانی نے تہران میں ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا تھا کہ سعودی سفارت خانے اور مشہد میں قونصل خانے پر حملوں میں ملوث 19 میں سے 5 ملزمان کو چھ چھ ماہ قید کی سزائیں سنائی گئی ہیں جب کہ باقی ملزمان کو بری قرار دیا گیا ہے۔

ان کا کہا تھ کہ جن پانچ ملزمان کو چھ چھ ماہ قید کی سزا سنائی گئی ہے وہ اپنی سزاؤں کے خلاف اپیل کورٹ میں سزا پر نظر ثانی کی اپیل کرسکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں