.

’ایران خطے میں عدم استحکام پھیلانے کی سازشوں سے باز رہے‘

توقع ہے حسن روحانی پالیسی تبدیل کریں گے:ٹیلرسن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی حکومت نے توقع ظاہر کی ہے کہ ایران کے صدر حسن روحانی کے دوبارہ انتخاباب کے بعد ایران خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے کی اپنی روایتی پالیسی پر نظر ثانی کرے گا۔ امریکا نے خبردار کیا ہے کہ تہران خطے کے ممالک میں بدامنی کو ہوا دینے والےعناصر کی پشت پناہی سے باز رہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹیلرسن نے سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں کہا کہ انہیں امید ہے کہ حسن روحانی اپنی دوسری بار صدارتی انتخابات میں کامیابی کے بعد پالیسی تبدیل کریں گے۔ بیلسٹک میزائل تجربات اور خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے والی قوتوں کی پشت پناہی روکتے ہوئے ملک میں جمہوری حقوق کو فروغ دیں گے۔

ریکس ٹیلرسن کا کہنا تھا کہ اگر ایران عالمی برادری کے ساتھ دوستانہ تعلقات کا خواہاں ہے تو اسے خطے میں سرگرم دہشت گردوں کی مدد روکنے کے ساتھ ساتھ میزائل تجربات کو روکنا ہوگا۔

سابق امریکی حکام اور مبصرین کا کہنا ہے کہ امریکا ایران میں صدر حسن روحانی کی کامیابی کے باجود تہران پر اس کے اسلحہ پروگرام کے حوالے سے دباؤ برقرار رکھے گا۔

حسن روحانی جمعہ کےروز ہونے والے صدارتی انتخابات میں دوسری بار کامیاب ہوئے ہیں۔ انہوں نے ڈالے گئے کل 57 فی صد ووٹ حاصل کیے ہیں۔